اسرائیل کے لیے 26 ارب ڈالر کی ہنگامی امریکی امداد کا بل منظور کرلیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی ایوان نمائندگان نے اسرائیل کے لیے 26 ارب ڈالر کی ہنگامی امداد کا بل منظور کر لیا، منظور کی جانے والی رقم میں انسانی ضروریات کے لیے نو ارب ڈالرز شامل ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق امداد کا بل اب منظوری کے لیے سینیٹ میں جائے گا، غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد سے امریکہ کی جانب سے اسرائیل کی مالی اور فوجی امداد میں اضافہ ہوا ہے، دو ماہ قبل بھی اسی طرح کا اقدام کیا گیا تھا۔

امریکی ایوان نمائندگان نے واضح حمایت کے ساتھ اسرائیل، یوکرین اور تائیوان کو سکیورٹی امداد فراہم کرنے کے لیے 95 ارب ڈالرز کا پیکج منظور کر لیا جبکہ ری پبلکن کے سخت گیر اراکین کی جانب سے سخت اعتراضات کیے گئے۔

بل یوکرین کے لیے تقریباً 61 ارب ڈالر فراہم کیے جائیں گے جس میں ہتھیاروں کے لیے 23 ارب ڈالرز بھی شامل ہیں۔

تائیوان سمیت ایشیا پیسفک کے لیے آٹھ ارب ڈالرز فراہم کیے جائیں گے۔

یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ امریکی قانون سازوں نے روس کے حملے کے بعد ان کے ملک کی حمایت کرکے ’تاریخ کو صحیح راستے پر گامزن کرنے‘ کی کوشش کی۔

تاہم روسی وزارت خارجہ کی ترجمان ماریا زاخارووا نے کہا کہ نئی امریکی قانون سازی عالمی سطح پر بحران کو مزید خراب کر دے گی، ’یوکرین کو فوجی امداد فراہم کرنا براہ راست دہشت گردانہ کارروائیوں کی حمایت کر رہا ہے۔‘

امریکی ایوان نمائندگان کے اجلاس کے دوران 58-366 کے فرق سے اسرائیل کو امداد دینے کی منظوری دی گئی، 37 ڈیموکریٹس اور 21 ریپبلکنز نے مخالفت کی۔

دوسری جانب امریکہ اسرائیل کو 6 ماہ بعد بھی جنگ بندی پر راضی نہ کرسکا، سات اکتوبر سے غزہ پر اسرائیلی حملوں میں کم از کم 34 ہزار 49 فلسطینی جاں بحق اور 76 ہزار 901 زخمی ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں