مشرق وسطیٰ

غزہ میں سیز فائر اور امداد فراہمی کی بھرپور کوشش کر رہے ہیں: سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب غزہ میں جنگ بندی اور انسانی بنیادوں پر امداد کی ترسیل کے لیے اپنی کوششوں کو پر زور طریقے سے جاری رکھے ہوئے ہے۔

اس امر کا اظہار وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے 'العربیہ' کے ساتھ ایک انٹرویو میں کیا ہے ان کا کہنا تھا کہ اسرائیل اور حماس کے درمیان معاہدہ میں جنگ بندی اور امدادی اشیاء کی ترسیل کو دو اہم عوامل کے طور پر شامل کیا جانا ضروری ہے۔

خیال رہے وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان ان دنوں لکسمبرگ میں یورپی یونین اور خلیج تعاون کونسل کے سیکیورٹی سے متعلق فارم میں شرکت کے لیے موجود ہیں۔

سعودی وزیر خارجہ نے اس موقع پر یہ انکشاف بھی کیا کہ یورپی یونین کے کئی رکن ممالک نے آزاد فلسطینی ریاست کو تسلیم کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ خطے میں امن کی جانب یہ ایک مثبت قدم ثابت ہوسکتا ہے۔

انہوں نے امید ظاہر کی کہ یورپی یونین کے کچھ ممالک فلسطین کو ضرور تسلیم کر لیں گے اور بعد ازاں دیگر کئی ملک بھی اسی عمل کی پیروی کریں گے۔

خیال رہے کہ غزہ کی اسرائیل جنگ میں صرف غزہ کی پٹی پر 34000 سے زائد فلسطینی شہید ہوچکے ہیں جن میں بڑی تعداد فلسطینی بچوں اور خواتین کی ہے۔

اسرائیل نے مسلسل ناکہ بندی کر کے امدادی سامان کی کی ترسیل بھی معطل کر رکھی ہے ۔ جس کی وجہ سے بین الاقوامی سطح پر بھی اسرائیل کے خلاف غم و غصہ پایا جاتا ہے کہ وہ غزہ میں مصنوعی قحط کا ماحول پیدا کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں