امریکی نژاد اسرائیلی یرغمالی کی ویڈیو واشنگٹن کے لیے ایک نئی آزمائش کیوں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اسرائیل اور حماس کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے تک پہنچنے کے لیے ہفتے قبل قطر اور مصری ثالثی سے شروع ہونے والے ناکام مذاکرات کے بعد، گذشتہ روز فلسطینی تحریک حماس نے ایک نوجوان اسرائیلی قیدی کا ویڈیو کلپ شائع کیا جس کے پاس امریکی شہریت بھی ہے۔

تاہم دونوں فریقوں کے درمیان بات چیت میں تعطل کے نے اس ویڈیو پیغام کے وقت سوالیہ نشان کو جنم دیا۔

امریکی نیوز ویب سائٹ ’ایکسیس‘ دو باخبر ذرائع نے بتایا کہ یہ ویڈیو کلپ قطری حکومت کی طرف ایک "اشارے" کے طور پر سامنے آیا ہے، جس نے حالیہ ہفتوں میں حماس پر قیدیوں کی زندگیوں کے ثبوت فراہم کرنے کے لیے دباؤ ڈالا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ 23 سالہ ہرش گولڈ برگ بولن کی نامعلوم ویڈیو نشر ہونے سے چند دن قبل دوحہ کے حوالے کر دی گئی تھی جس کے نتیجے میں اسے گزشتہ پیر کو امریکہ اور اسرائیل کے حوالے کر دیا گیا تھا۔

ایک امریکی اہلکار نے تصدیق کی کہ امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کو پیر کو یہ ویڈیو موصول ہوئی، جس میں کہا گیا کہ’’ہم اس وقت سے نوجوان کے خاندان سے رابطے میں ہیں‘‘۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایف بی آئی اور ہوسٹج ریکوری سیل اس وقت مفید معلومات کے لیے ویڈیو کی جانچ کر رہے ہیں۔

زندہ ہونے کا ثبوت

اس معاملے سے واقف ایک ذریعے نے وضاحت کی کہ بائیڈن انتظامیہ نے کئی بار قطری ثالث سے اس بات کا ثبوت حاصل کرنے کے لیے کہا کہ گولڈ برگ بولن اور دیگر امریکی قیدی اب بھی زندہ ہیں۔

اسرائیلی قیدی ہرش گولڈ برگ پولین (رائٹرز)
اسرائیلی قیدی ہرش گولڈ برگ پولین (رائٹرز)

Axios کے مطابق زندگی کے اس ثبوت کو محفوظ کرنا (خاص طور پر ایک امریکی شہری کے لیے) اس کیس کے دوران اور قطری ثالثوں کے لیے ایک اہم کامیابی ہے۔

اس ویڈیو سے قطریوں کو اسرائیل اور کانگریس کے کچھ اراکین کی تنقید کو روکنے میں بھی مدد مل سکتی ہے کہ وہ قیدیوں کے معاہدے کو آگے بڑھانے کے لیے حماس پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کررہے یہں۔

امریکی کانگریس کے بعض ارکان کی جانب سے شدید تنقید کے بعد گذشتہ ہفتے قطر نے اعلان کیا تھا کہ وہ اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ بندی اور قیدیوں کے مذاکرات میں ثالثی میں اپنے کردار کا از سر نو جائزہ لے گا۔

نیتن یاہو کی چالبازی

جبکہ ایک باخبر ذریعے کا خیال ہے کہ قطر کے اس موقف کی ایک وجہ دوحہ کا یہ احساس ہے کہ اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو اندرونی سیاسی وجوہات کی بنا پر قطر کے خلاف "سیاسی ہتھکنڈے" چلا رہے ہیں۔

ذرائع کے مطابق دوسری وجہ مذاکرات کے دوران حماس اور اسرائیل کے ایک ساتھ رویے سے مایوسی ہے۔

مرکز میں اسرائیلی قیدی ہرش گولڈ برگ پولین کی تصویر (رائٹرز)
مرکز میں اسرائیلی قیدی ہرش گولڈ برگ پولین کی تصویر (رائٹرز)

اسی ذریعے نے کہا کہ دوحہ کو لگتا ہے کہ دونوں فریق سنجیدگی سے کسی معاہدے پر پہنچنا نہیں چاہتے اور ضروری رعایتیں دینے کے لیے تیار نہیں ہیں۔

قابل ذکر ہے کہ گولڈ برگ بولن کی ویڈیو نیتن یاہو پر قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے کو آگے بڑھانے پر راضی ہونے کے لیے دباؤ بڑھا سکتی ہے۔

خاص طور پر چونکہ گولڈ برگ پولن فیملی نے کل ایک بیان جاری کیا تھا جس میں تمام اسرائیلی میڈیا پر زور دیا گیا تھا کہ وہ اس ویڈیو کو پرائم ٹائم پر نشر کریں، تاکہ اس مسئلے پر دباؤ بڑھانے اور روشنی ڈالنے کی کوشش کی جائے۔

جبکہ اس کے والدین نے اسے زندہ دیکھ کر سکون محسوس کیا تاہم ایک ہی وقت میں انہوں نے زور دیا کہ "وہ اس کی صحت کے ساتھ ساتھ دیگر تمام یرغمالیوں کی صحت کے بارے میں فکر مند ہیں"۔

انہوں نے قطر، مصر، امریکہ، حماس اور اسرائیل سمیت تمام مذاکراتی فریقوں سے بھی اپیل کی کہ وہ "حوصلے کا مظاہرہ کریں اور معاہدے تک پہنچنے کے موقع سے فائدہ اٹھائیں"۔

سات اکتوبرکو یرغمال بنائے گئے لگ بھگ 130 اسرائیلی اب بھی زیر حراست ہیں، جب کہ اسرائیلی حکام کا اندازہ ہے کہ ان میں سے تقریباً 35 ہلاک ہو چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں