رفح میں کوئی بھی فوجی آپریشن غزہ میں تباہی لائے گا: مصری صدر

غزہ میں جاری جنگ کو روکنے کی ضرورت ہے: السیسی کی نیدر لینڈز کے وزیر اعظم سے فون پر گفتگو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصری صدر عبدالفتاح السیسی نے کہا ہے کہ فلسطینی شہر رفح میں کسی بھی فوجی آپریشن سے غزہ کی پٹی میں انسانی صورتحال پر تباہ کن اثرات مرتب ہوں گے۔ ڈچ وزیر اعظم مارک روٹے کے ساتھ ایک فون کال کے دوران السیسی نے غزہ کی پٹی میں جاری جنگ کو روکنے کی ضرورت پر زور دیا اور رفح میں کسی بھی فوجی کارروائی کے خلاف خبردار کیا۔

مصری ایوان صدر کے مشیر ڈاکٹر احمد فہمی نے بتایا کہ اس فون کال میں غزہ کی پٹی کی صورت حال اور پٹی میں جنگ بندی اور انسانی امداد کی ترسیل اور علاقائی استحکام کی بحالی میں مصری کوششوں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ السیسی نے کہا کہ عالمی برادری کا اقوام متحدہ کی متعلقہ قراردادوں پر عمل درآمد کے لیے اپنی ذمہ داریاں نبھانا بہت اہم ہے۔

دونوں رہنماؤں نے جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے فوری کام کرنے کی اہمیت پر اتفاق کیا۔ غزہ کی پٹی کے تمام علاقوں تک انسانی امداد کی مناسب رسائی کو یقینی بنانے کی ضرورت پر بھی زور دیا گیا تاکہ وہاں پر رونما ہونے والے انسانی المیے سے بچا سکے۔ انہوں نے کہا کہ خطے کی سلامتی اور امن کے قیام کے لیے دو ریاستی حل کا نفاذ معاون ثابت ہوگا۔

یاد رہے مصر نے ان خبروں کی تردید کی ہے کہ اس نے رفح پر حملہ کرنے کے منصوبے کے بارے میں اسرائیلی فریق کے ساتھ بات چیت کی تھی۔ ریاستی انفارمیشن سروس کی سربراہ ضیا رشوان نے ایک بڑے امریکی اخبار میں شائع ہونے والی اس بات کی واضح طور پر تردید کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ مصر نے اسرائیل کے ساتھ رفح حملے کی کارروائی پر بات کی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں