یورپی یونین: خلیجی ملکوں میں جائزہ کےبعد شینگن ویزوں کی میعاد بڑھانے کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یورپی یونین نے قطر، کویت، عمان، بحرین اور سعودی عرب کے تمام شہریوں کے لیے شینگن ویزوں کی میعاد کو 5 سال تک بڑھانے کا فیصلہ رکن ممالک کے قونصل خانوں کی جانب سے کیے گئے جائزے کی بنیاد پر کیا جائے گا۔ یہ اقدام یورپی یونین کی حکمت عملی کا حصہ ہے۔ ویزوں میں توسیع کا مقصد بلاک اور خلیجی خطے کے درمیان تعلقات کو مضبوط کرنا ہے۔

مشرق وسطیٰ کے لیے یورپی یونین کے سرکاری ترجمان لوئیس میگوئل نے ’’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘‘ کو بتایا کہ یہ فیصلہ بہت اہمیت کا حامل ہے اور لوگوں کے درمیان رابطے کو بڑھانے اور یورپی یونین اور خلیج تعاون کونسل ممالک میں شہریوں کے درمیان تبادلے کو آسان بنانے کے لیے ایک اہم قدم ہے۔ فیصلہ خلیجی ممالک میں موجود قونصل خانوں میں ایک جامع تشخیص کی بنیاد پر لیا گیا ہے۔

ایک سے زیادہ داخلے کی اجازت والا یہ ویزا اپنے ہولڈر کو شینگن علاقے 5 سال کے اندر 180 دن گزارنے اور ایک مرتبہ میں 90 دن گزارنے کی اجازت دیتا ہے۔ اس فیصلے سے قبل ایک سال کی میعاد کے ساتھ ایک سے زیادہ داخلے کا ویزا جاری کیا جاتا تھا۔

سعودی عرب، بحرین اور سلطنت عمان میں یورپی یونین کے سفیر کرسٹوف ورنو نے العربیہ کے پروگرام "الرابعہ" میں کہا کہ ہم نے شینگن ویزا کی تیاری پر کام شروع کردیا۔ یہ ویزا خلیجی ممالک کے شہریوں کے لیے الیکٹرانک طور پر دستیاب ہے ۔ تاہم درخواستیں قبول کرنے کا آغاز کب ہوگا تو اس حوالے سے کوئی تاریخ کا بتانا ممکن نہیں۔ ہم تمام خلیجی ملکوں میں قوانین کے ساتھ ملکر کام کر رہے ہیں۔ ان ملکوں کے قوانین میں فرق ہے۔ مثال کے طور پر سعودی عرب، بحرین، عمان میں جو قوانین ہیں وہ کویت اور قطر کے قوانین سے مطابقت نہیں رکھتے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں