امریکہ کی " نتساح یہودا" بٹالین کو سزا دینے کے فیصلے پر نظر ثانی، پابندی معطل کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

باخبر امریکی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ امریکی محکمہ خارجہ نے مغربی کنارے میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی وجہ سے اسرائیلی فوج کی " نتساح یہودا" بٹالین پر عائد پابندیاں معطل کر دی ہیں۔ واشنگٹن اب اسرائیل کی طرف سے فراہم کردہ نئی معلومات کی روشنی میں اس معاملے کا جائزہ لے رہا ہے۔ اس مسئلے سے واقف ایک شخص نے بتایا کہ امریکہ اور اسرائیل کے درمیان ایک خصوصی معاہدہ موجود ہے جس کے تحت واشنگٹن کو اسرائیلی افواج کے خلاف کوئی بھی تعزیری فیصلہ کرنے سے پہلے تل ابیب سے مشورہ کرنے کی ضرورت ہے۔

نیوز ویب سائٹ ’’ ایکسیوس‘‘ کے مطابق اسرائیلی اور امریکی حکام نے یہ بھی انکشاف کیا کہ حالیہ دنوں میں اسرائیلی فوج کے وکلا، اسرائیلی وزارت خارجہ اور امریکی محکمہ خارجہ کے اہلکاروں کے درمیان متعدد مرتبہ فون پر بات چیت ہوئی۔ اس دوران اسرائیل نے " نتساح یہودا" بٹالین کے بارے میں نئی معلومات شیئر کیں۔

ٹک ٹاک ویڈیو

ایک اسرائیلی اہلکار نے بتایا کہ نئی معلومات 2022 سے ٹک ٹاک پلیٹ فارم پر شائع ہونے والی ایک ویڈیو پر مرکوز ہے جس میں بٹالین کے فوجیوں نے فلسطینی نظربندوں کے ساتھ بدسلوکی کرتے ہوئے خود کو فلمایا۔ اسرائیلی اہلکار نے کہا کہ یہ ویڈیو بٹالین کے خلاف امریکی دعوے کا ایک لازمی حصہ ہے۔ اسرائیل نے وزارت خارجہ کو اس واقعے کی تحقیقات اور کیے گئے تادیبی اقدامات کے بارے میں معلومات فراہم کردی ہیں۔

اسرائیل نے واضح کیا کہ فوجیوں کے خلاف کوئی سول مقدمہ نہیں ہے کیونکہ فلسطینیوں کی جانب سے کوئی شکایت درج نہیں کی گئی ہے۔ دریں اثنا ایک امریکی اہلکار نے کہا کہ واشنگٹن اسرائیلی فوج کے یونٹوں کی خلاف ورزیاں ثابت ہونے پر ان پر پابندیوں کو مسترد نہیں کرے گا۔ بائیڈن انتظامیہ نے " نتساح یہودا" بٹالین کو امریکی فوجی امداد اور تربیت کو روکنے کا ارادہ کیا ہے اور یہ دونوں ملکوں کے تعلقات کی تاریخ میں منفرد واقعہ ہے۔

" نتساح یہودا" بٹالین کیا ہے؟

واضح رہے " نتساح یہودا" بٹالین 1999 میں انتہائی قدامت پسند یہودیوں اور دیگر قومی مذہبی عقائد رکھنے والوں کو فوج میں بھرتی کرنے کے لیے تشکیل دی گئی تھی۔ یہ بٹالین مغربی کنارے میں کام کرتی تھی۔ امریکی تنقید کے بعد 2022 میں اسے ہٹا دیا گیا تھا۔ حال ہی میں اس بٹالین نے غزہ میں کام کیا ہے۔ " نتساح یہودا" بٹالین کے کمانڈر کو 2022 میں سرزنش کی گئی تھی اور دو افسران کو فلسطینی نژاد ایک بزرگ امریکی کی موت کی وجہ سے برطرف کر دیا گیا تھا۔ اس بزرگ کو بٹالین کے سپاہیوں نے مغربی کنارے میں گرفتار کیا تھا۔

گزشتہ چند سالوں میں کئی دیگر واقعات بھی پیش آئے جن میں سے کچھ کے ویڈیو کلپس بھی سامنے آئے۔ اس بٹالین کے فوجیوں کی جانب سے فلسطینی قیدیوں کے ساتھ ناروا سلوک برتنے کا انکشاف کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں