امریکی سینیٹر کا جامعات میں احتجاج روکنے کے لیے نیشنل گارڈز تعینات نہ کرنے کا مشورہ

نیشنل گارڈ کو طلب کرنا ویتنام جنگ کے خلاف مظاہروں کا منظرنامہ یاد دلاتا ہے اور یہ اچھا اقدام نہیں:ٹیم کین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ڈیموکریٹک سینیٹر ٹم کین نے امریکی انتظامیہ کو مشورہ دیا کہ وہ نیشنل گارڈ کو کالجوں اور یونیورسٹیوں میں فلسطین کے حامی احتجاج کو روکنے کے لیے تعینات نہ کرے کیونکہ یہ انتہائی غلط سوچ ہے۔

انہوں نے امریکی نیٹ ورک ’این بی سی‘ پر ایک انٹرویو میں کہا کہ "میرے خیال میں نیشنل گارڈ کو کالج کیمپس میں بلانے سے ہمیں اس بات کی یاد دلائے گی کہ ویتنام جنگ کے دوران کیا ہوا تھا۔اس جنگ کا انجام اچھا نہیں ہوا"۔ انہوں نے وضاحت کی نیشنل گارڈ جو یونیورسٹی کیمپس، کینٹ اسٹیٹ اور دیگر مقامات پراس نے معاملات کو اچھے طریقے سے نہیں سنبھالا"۔

انہوں نے کہا کہ"میرے خیال میں یہ ایک بہت برا خیال ہوگا اور مجھے شک ہے کہ کیمپس سکیورٹی کو استعمال کرنے کے اور بھی طریقے ہیں، لیکن ایک بار پھر ہمیں طلباء کو سول اور تعمیری مکالمے کے مزید مواقع فراہم کرنے چاہئیں، جہاں لوگ دوسرے کی بات سنیں گے‘‘۔

کچھ قانون سازوں نے مشورہ دیا ہے کہ وائٹ ہاؤس نے ملک بھر میں اسرائیل اور حماس کے کالج کیمپس کے درمیان جنگ پراحتجاج کے طور پر نیشنل گارڈ کو بھیج دیا ہے۔ کئی یونیورسٹیوں نے مقامی اور ریاستی پولیس کو مظاہروں کو ختم کرنے کی اجازت دی اور سینکڑوں طلباء کو گرفتار کر لیا گیا۔

پچھلے ہفتے وائٹ ہاؤس نے ہاؤس کے اسپیکرمائیک جانسن اور دیگر کی جانب سے نیشنل گارڈ کو بلانے کی کالوں پر تبصرہ کیا اور وائٹ ہاؤس کی ترجمان کیرین جین پیئر نے تصدیق کی کہ یہ معاملہ صدر تک نہیں ہے بلکہ ریاستی گورنرز تک ہے۔

یہ مظاہرے ایک ہفتے سے زائد عرصے تک جاری رہے جن میں سے اکثر پرامن ہونے کی اطلاعات ہیں۔ تاہم یہود مخالف بیان بازی کے پھیلاؤ اور یہودی طلباء کی حفاظت کے بارے میں خدشات کا اظہار کیا گیا ہے۔

دیگر قانون سازوں نے نیشنل گارڈ کے کیمپس میں داخل ہونے کے بارے میں خدشات کا اظہار کیا۔ سینیٹ کے اقلیتی رہ نما میک کونل نے کہا کہ یونیورسٹی کے چانسلر کو "دفاع کی پہلی لائن" ہونا چاہیے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں