رفح میں فوجی آپریشن کے حوالے سے ہمارے خدشات دور نہیں ہوئے: امریکہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن کی اسرائیل آمد کے ساتھ امریکی محکمہ خارجہ نے زور دیا ہے کہ واشنگٹن فوری جنگ بندی معاہدے تک پہنچنے کے لیے پرعزم ہے تاکہ یرغمالیوں کی رہائی کی ضمانت دیتا ہے اور امداد میں اضافے کے لیے اضافی اقدامات کیے جا سکیں۔

رفح آپریشن کے حوالے سے خدشات برقرار

امریکی محکمہ خارجہ کے نائب ترجمان ویدانت پٹیل نے کہا ہے کہ امریکہ نے جنوبی غزہ کی پٹی کے شہر رفح میں فوجی آپریشن شروع کرنے کا کوئی قابل اعتبار اسرائیلی منصوبہ نہیں دیکھا جو اس کے خدشات کو دور کرے۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے منگل کے روز اس عزم کا اظہار کیا تھا کہ وہ رفح شہر میں بے گھر ہونے والے دس لاکھ سے زائد فلسطینیوں کے مستقبل کے بارے میں بین الاقوامی تشویش کے باوجود فوجی کارروائی کریں گے۔

امریکی وزیر خارجہ کا دورہ اسرائیل

کل منگل کو امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن غزہ کی پٹی میں جنگ بندی کے معاہدے پر زور دینے کے لیے تل ابیب پہنچے تھے۔

بلنکن ایک علاقائی دورے پر ہیں جس کے دوران وہ عمان میں بھی رُکے جہاں انہوں نے حماس سے جنگ بندی کی تجویز کو قبول کرنے اور سات اکتوبر کو جنگ شروع ہونے کے بعد سے غزہ کی پٹی میں قید یرغمالیوں کو رہا کرنے کا مطالبہ کیا۔

أنتوني بلينكن

بلنکن نے امداد سے لدے پہلے اردن کے ٹرک قافلے کے آغاز کا مشاہدہ کیا جسے ایریز (بیت حانون) کراسنگ کے ذریعے غزہ کی پٹی کی طرف روانہ کیا گیا۔

انٹونی بلنکن نے امدادی گزرگاہ کو دیکھتے ہوئے صحافیوں کو بتایا کہ "یہاں سے اردن میں ہمیں اردن سے شمالی غزہ تک ایریز کراسنگ کے ذریعے ایک سیدھی سڑک نظر آتی ہے۔ یہاں سے پہلی کھیپ آج روانہ ہوئی ہے"۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں