بعض بموں کی اسرائیل کو فراہمی حتمی فیصلے کے بغیر التوا میں ڈال دی گئی: امریکی ذمہ دار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

جوبائیڈن انتظامیہ کے ایک سینئر افسر نے دعوی کیا ہے کہ امریکہ نے رفح میں اسرائیلی فوجی آپریشن کے بارے میں بعض خدشات کے باعث اسرائیل کو بعض قسم کے بموں کی ترسیل روک دی ہے۔

اسرائیلی فوج نے ایک اندازے کے مطابق ہفتے کے شروع میں 100,000 فلسطینیوں کو متوقع فوجی حملے سے قبل رفح سے نکل جانے کا حکم دیا ہے۔ جبکہ رفح میں کم از کم 14 لاکھ فلسطینی موجود ہیں ۔

غزہ میں اسرائیلی جنگ جو آٹھویں ماہ میں جاری ہے کے دوران بے گھر ہونے والے لاکھوں فلسطینیوں نے رفح میں پناہ لی ہے۔ جنہیں ایک بار پھر نقل مکانی پر اسرائیلی فوج مجبور کر رہی ہے۔

حالیہ ہفتوں کے دوران اسرائیل نے رفح پر حملہ کرنے کی دھمکی دی ۔ اس سلسلے میں اسے اپنے اتحادیوں کی حمایت حاصل رہی ہے۔ البتہ بعض ایشوز پر اسرائیل کے اتحادیوں کے ساتھ اسرائیل کے عدم اتفاق کا تاثر موجود ہے۔ امریکہ رفح پر حملے سے پہلے اسرائیل کے منصوبے کو قابل اعتبار منصوبے کے طور پر دیکھنا چاہتا تھا۔

لیکن امریکہ نے عوامی طور پر کہا ہے کہ وہ اس طرح کے آپریشن کا مخالف ہے اور اس نے کہا ہے کہ شہریوں کے تحفظ کے لیے ایک قابل اعتبار منصوبہ بندی کی ضرورت ہے۔

جوبائیڈن انتظامیہ کے سینئر ذمہ دار نے منگل کو کہا کہ امریکی اور اسرائیلی حکام رفح کے شہریوں کی انسانی ضروریات کو یقینی بنانے کے طریقوں پر باہم تبادلہ خیال کر رہے ہیں کہ رفح میں حماس کے خلاف غزہ کے دیگر مقامات کے مقابلے میں مختلف طریقے سے آپریشن کیسے کیا جائے۔ کیونکہ شمالی غزہ میں، دسیوں ہزار شہری مارے جا چکے ہیں۔

امریکی ذمہ دار نے ' العربیہ ' کو بتایا کہ امریکی حکام نے اپنے اسرائیلی ہم منصبوں پر دباؤ ڈالا کہ حماس کے عسکریت پسندوں یا اہداف کا تعاقب کرتے وقت زیادہ اچھی طرح نشانہ بنائے۔ اس ذمہ دار کا کہنا تھا ہماری یہ بات چیت جاری ہے جیسے جیسے اسرائیلی رہنما اس طرح کے آپریشن کے بارے میں فیصلہ کن نقطہ پر پہنچ جائیں گے اتفاق ہو جائے گا ۔

اس لئے اس وقت تک ہم نے اسرائیل کو مخصوص ہتھیاروں کی مجوزہ منتقلی کو زیر غور رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ہماری طرف سے یہ غور اپریل میں شروع ہوا تھا۔ اس جائزے کے نتیجے میں، امریکہ نے گزشتہ ہفتے ہتھیاروں کی ایک کھیپ کو روک دیا۔

بتایا گیا ہے کہ ان روکے گئے ہتھیاروں میں بموں کی کئی قسمیں شامل ہیں۔ جن میں 1,800 2,000-lb بم اور 1,700 500-lb بم شامل ہیں۔ ان میں بوئنگ ساختہ بم ہیں۔ ہم خاص طور پر 2,000-lb بموں کے آخری استعمال کے بارے میں غور کر رہے ہیں۔

اس امریکی ذمہ دار نے کہا ' تاہم ابھی حتمی فیصلہ نہیں کیا ہے کہ اس کھیپ کے ساتھ کیسے آگے بڑھنا ہے اور کیا فیصلہ کرنا ہے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں