پولیس نے جارج واشنگٹن یونیورسٹی میں فلسطینی حامی کیمپ ختم کر دیا، درجنوں گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

پولیس نے بدھ کے اوائل میں جارج واشنگٹن یونیورسٹی میں فلسطینیوں کا حامی خیمہ کیمپ خالی کرنا شروع کر دیا جب چند گھنٹوں پہلے درجنوں مظاہرین اس مقام سے چلے گئے اور صدر ایلن گرانبرگ کے گھر کی طرف مارچ کرنے لگے۔

طلبہ کے زیرِ انتظام چلنے والے یونیورسٹی کے خودمختار اخبار جی ڈبلیو ہیچٹ کے مطابق "افسران نے مظاہرین کو 3:30 بجے صبح کے قریب وہاں سے چلے جانے کے لیے تیسری اور آخری مرتبہ خبردار کرتے ہوئے کہا کہ یونیورسٹی یارڈ اور پلازہ کے سامنے ایچ اسٹریٹ کے حصے میں موجود رہنے والے تمام افراد کو گرفتار کر لیا جائے گا۔"

واشنگٹن ڈی سی میں یونیورسٹی کے عہدیداروں نے یونیورسٹی یارڈ میں احتجاجی سرگرمیوں میں شریک طلباء کے لیے ممکنہ معطلی کے بیانات دیتے ہوئے خبردار کیا تھا۔

یونیورسٹی نے ایک بیان میں کہا، "جبکہ یونیورسٹی اپنے طلباء کے آزادئ اظہار کے حقوق کے تحفظ کے لیے پرعزم ہے لیکن کیمپ ایک غیر قانونی سرگرمی میں تبدیل ہو گیا تھا جس میں شرکاء نے یونیورسٹی کی متعدد پالیسیوں اور شہر کے ضوابط کی براہِ راست خلاف ورزی کی تھی۔"

مقامی میڈیا نے اطلاع دی تھی کہ کچھ مظاہرین پر سیاہ مرچوں کا سپرے کیا گیا جب پولیس نے انہیں کیمپ میں داخل ہونے سے روکا اور کمیونٹی کے منتظمین کے مطابق تقریباً 30 افراد کو گرفتار کر لیا گیا۔

منگل کی شام مظاہرین نے پلے کارڈز کے ساتھ گرانبرگ کے گھر کی طرف مارچ کیا جن پر لکھا تھا: "آزاد فلسطین" اور "رفح سے ہاتھ ہٹاؤ"۔ ہجوم کو سنبھالنے کے لیے پولیس کو طلب کیا گیا تھا۔ کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی۔

یہ واقعہ اس وقت پیش آیا ہے جب میئر موریل باؤزر اور میٹروپولیٹن پولیس ڈیپارٹمنٹ کی سربراہ پامیلا سمتھ بدھ کی سہ پہر کو ایوان کی کمیٹی برائے نگرانی و احتساب کی سماعت میں ڈسٹرکٹ آف کولمبیا کے احتجاج سے نمٹنے کے بارے میں گواہی دینے کے لیے تیار تھیں۔

منگل کو شکاگو یونیورسٹی میں فلسطینیوں کا حامی خیمہ کیمپ خالی کر دیا گیا جب منتظمین جنہوں نے ابتدائی طور پر اجازت دینے والا طریقہ اپنایا تھا، نے کہا کہ احتجاج ایک حد عبور کر گیا تھا اور حفاظت کے بارے میں بڑھتے ہوئے خدشات کا باعث بنا تھا۔

یونیورسٹی کے صدر پال الیویساتوس نے آزادئ اظہار کے محافظ کے طور پر سکول کے کردار کو تسلیم کیا جب فسادات سے نمٹنے والے لباس میں افسران نے سکول کے مستطیل حصے تک رسائی روک دی لیکن ساتھ ہی بہت ہو گیا والا مؤقف اختیار کیا۔

الیویساتوس نے یونیورسٹی کمیونٹی کے نام ایک پیغام میں لکھا، "یونیورسٹی ایک ایسی جگہ ہے جہاں اختلافی آوازوں کے پاس اپنے اظہار کے لیے بہت سے راستے ہوتے ہیں لیکن ہم ایسے ماحول کی اجازت نہیں دے سکتے جہاں کچھ لوگوں کا اظہار غالب ہو اور باقی افراد کے لیے کمیونٹی کی صحت مند سرگرمیوں میں خلل پیدا ہو۔"

کولمبیا یونیورسٹی میں احتجاج سے شروع کی گئی تحریک میں - اور یورپ میں بھی بڑھتے ہوئے - تقریبا تین ہفتوں سے امریکہ کے طول و عرض میں کیمپسز میں مخالف مظاہرین کے درمیان کشیدگی جاری ہے۔

کچھ کالجوں نے غزہ کی پٹی پر اسرائیل کی جنگ کے خلاف مظاہروں پر فوری طور پر کریک ڈاؤن کیا۔ اس جنگ میں اب تک 34,000 سے زیادہ فلسطینی جاں بحق ہو چکے ہیں۔

خیمہ کیمپوں کو برداشت کرنے والوں میں سے کچھ افراد کا صبر جواب دینے لگا ہے اور انہوں نے کیمپس کی زندگی میں خلل پیدا کرنے، حفاظت اور غیر طلباء کی شمولیت کے خدشات پر پولیس کو بلانا شروع کر دیا ہے۔

اٹھارہ اپریل سے اب تک 50 کیمپسز سے 2,600 سے کچھ زیادہ افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔ یہ اعداد و شمار اے پی کی رپورٹنگ اور یونیورسٹیوں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے بیانات پر مبنی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں