دمشق میں ایران نواز ملیشیا کے ہیڈ کوارٹر پراسرائیلی بمباری کے متضاد دعوے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

العربیہ/الحدث کے ذرائع کے مطابق ممکنہ طور پر اسرائیلی بمباری نے دارالحکومت دمشق کے جنوب میں حرکت النجباء ملیشیا کے ہیڈ کوارٹر کو نشانہ بنایا ہے جہاں سے دھوئیں کے بادل اور آگ کے شعلے بلند ہوتے دیکھےگئے ہیں۔

یہ بھی بتایا گیا ہے کہ بم دھماکے میں آج جمعرات کو دارالحکومت دمشق کے جنوب میں ہوائی اڈے کی سڑک پر چوتھے پل کے قریب نقل و حرکت کی جگہ کو نشانہ بنایا گیا۔

دوسری طرف شام کی وزارت دفاع نے اعلان کیا کہ فضائی دفاع نے گولان کی پہاڑیوں سے دمشق کے دیہی علاقوں کی طرف داغے گئے اسرائیلی میزائلوں کو مار گرایا۔

وزارت دفاع نے بتایا کہ یہ بمباری آج صبح تقریباً تین بجے مقبوضہ شام کے گولان کی سمت سے ہوئی جس میں دمشق کے دیہی علاقوں میں ایک عمارت کو نشانہ بنایا گیا اور ان میں سے کچھ کو مار گرایا گیا۔ بمباری میں عمارت کو نقصان پہنچا تاہم کوئی جانی نقصان نہیں ہوا ہے۔

تحریک النجباء

قابل ذکر ہے کہ النجباء موومنٹ شام میں 2013 ء سے سرگرم ے، لیکن اس "بریگیڈ" یا اس کی تعیناتی کے علاقوں کے لیے کسی خاص آپریشن کا اعلان نہیں کیا گیا، حالانکہ اس تنظیم نے گذشتہ سال ستر اکتوبر کے بعد شام اور عراق میں امریکی افواج کے اڈوں اور جنوبی اسرائیل کےایلات شہر پر حملوں کا دعویٰ کیا ہے۔

شام میں خانہ جنگی شروع ہونے کے بعد سے اسرائیل نے لبنانی حزب اللہ کی قیادت میں شامی حکومت کی افواج کے ساتھ مل کر لڑنے والے شامی فوج اور ایران کے وفادار مسلح دھڑوں کو نشانہ بناتے ہوئے سینکڑوں فضائی حملے کیے ہیں۔

عراق کی النجباء تحریک۔ [اے ایف پی]
عراق کی النجباء تحریک۔ [اے ایف پی]

لیکن 7 اکتوبر کو غزہ کی پٹی میں اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ شروع ہونے کے بعد سے ان اسرائیلی حملوں کی رفتار میں اضافہ ہوا ہے۔

اسرائیل شام میں اپنے حملوں پر شاذ و نادر ہی تبصرہ کرتا ہے لیکن اس بات پر زور دیتا ہے کہ وہ ایران کو پڑوسی ملک میں اپنے پائوں جمانے کی اجازت نہیں دے گا۔

اپریل میں اسرائیل دمشق میں ایرانی قونصل خانے کی ایک عمامرت پر حملے میں پاسداران انقلاب کے سات افسران جن میں سے دو سینیر کمانڈر شامل تھے کو ہلاک کرچکا ہے جس کے بعد دونوں ممالک ایک دوسرے کے خلاف حالت جنگ میں آگئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں