ایوان نمائندگان : ری پیبلیکنز نے اسرائیل کو فوجی اسلحے کی ترسیل میں تاخیر کا نوٹس لے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی ایوان نمائندگان نے جمعرات کے روز ایک بل منظوری کے لیے پیش کیا ہے جس میں صدر جوبائیڈن پر زور دیا گیا ہے کہ اسرائیل کی فوج کے لیے اسلحہ کی ترسیل کا عمل تیز کیا جائے۔ بل میں ڈیمو کریٹس کی طرف سے اسرائیل کو اسلحے کی شپمنٹ میں تاخیر کرنے کی کوشش پر ان کی سرزنش کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔

اس بل ' دی اسرائیل سیکیورٹی اسسٹننس سپورٹ ایکٹ ' کے حق میں ابتدائی طور پر 224 میں سے 187 ووٹ آئے ہیں۔۔ پارٹی کی طرف سے دی گئی ہدایات پر ری پبلکن ارکان نے زیادہ تر بل کے حق میں ووٹ دیا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس ایکٹ کے قانون کی شکل اختیار کرنے کا امکان نہیں ہے۔ تاہم اس کی ایوان میں آمد سے صدارتی انتخابی مہم کے دوران امریکی سیاسی تقسیم پر گہرے اثرات مرتب ہونے کا امکان ہے۔ کیونکہ اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کی حکومت حماس کے جنگجووں کا خاتمہ کرنے کا بیانیہ اختیار کیے ہوئے ہے۔

خیال رہے اسرائیلی فوج نے اب تک کی جنگ کے دوران کم از کم 35272 فلسطینیوں کو ہلاک کیا ہے۔ اس سلسلے میں فلسطینی حکام کا کہنا ہے ان ہلاک کیے گئے فلسطینیوں میں زیادہ تر تعداد فلسطینی بچوں اور عورتوں کی ہے۔ جبکہ غزہ کی اکثریتی آبادی بھی اسرائیلی بمباری سے بے گھر ہو چکی ہے۔

ادھر امریکہ میں ری پبلکن ارکان کا کہنا ہے کہ اصدر جوبائیڈن امریکی عوام اور طلبہ کی طرف سے جنگ بندی کے حق میں کیے گئے مظاہروں کی وجہ سے اسرائیلی امداد سے منہ موڑ رہے ہیں۔

ری پبلکنز کے سپیکر مائیک جانسن نے اس سلسلے میں بدھ کے روز کہا تھا 'صدر جوبائیڈن کا یہ انداز عالمی مضمرات کا پیش خیمہ بنے گا اور تباہ کن ثابت ہوگا۔

دوسری جانب ڈیمو کریٹس نے ری پبلکنز پر الزام لگایا ہے کہ وہ اہم معاملات کی بنیاد پر سیاست کر رہے ہیں۔ا س مقصد کے لیے جوبائیڈن کے اختیار کردہ موقف کو مسخ کر کے پیش کر رہے ہیں۔ ایوان نمائندگان میں ڈیمو کریٹس کے لیڈر جیفریز نے کہا ' ری پبلکنز قانون سازی کے لیے سنجیدہ کوشش نہیں کر رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ڈیموکریٹس میں موجود اسرائیل نواز ارکان میں سے بھی کچھ ووٹ نہیں دیں گے۔

واضح رہے اسرائیل دنیا کے ان ملکوں میں شامل ہے جو امریکہ کا سب سے اسلحہ پانے والے ملکوں میں سے ایک اور نمایاں ہے۔ اس وقت بھی اس کی یہی حالت ہے ۔ وہ 2000 پاؤنڈ کے بموں اور 500 پاؤنڈ وزن کے بموں کی ایک شپمنٹ میں جائزے کی وجہ سے ایک تاخیر کے علاوہ سب کچھ اسی طرح وصول کر رہا ہے ۔ جس طرح امریکہ سے اسے پہلے مل رہا تھا۔

امریکی حکام پہلے ہی بتا چکے ہیں کہ امریکی دفتر خارجہ نے منگل کے روز تک ایک نیا امریکی پیکج کانگریس کی منظوری کے لیے پیش کیا تھا ۔ یہ پیکج ایک ارب ڈالر مالیت کا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں