دنیا بھرمیں زلزلوں کی پیشگوئیوں کا تہلکہ مچانے والے اہرام مصر کی انجینیرنگ پر حیران

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

آئے روز دنیا میں زلزلوں کی پیشگوئیوں کی وجہ سے مشہور ہونے والے ڈچ سیسموگرافر فرینک ہوگربیٹز نے 'اہرام مصر' کے بارے میں ایک ٹویٹ کی ہے۔

ہوگربیٹز نے مصر کی جیزاگوریر میں موجود اہرام اور اسفنکس کی ایک تصویر'ایکس' پلیٹ فارم پر پوسٹ کی اور ٹویٹ کیا کہ "جیزا اہرام کے فن تعمیر پر جب صحیح طریقے سے تحقیق کی جاتی ہے، تو اس میں بہت زیادہ جدید علم کا ثبوت ملتا ہے، جو جدید دور کی سمجھ کے مطابق اس سے بہت پہلے موجود نہیں ہوسکتا تھا"۔

انہوں نے مزید کہا کہ "ہمیں ابھی بھی اس سیارے کی حقیقی تاریخ کے بارے میں بہت کچھ دریافت کرنا ہے"۔

انہوں نے لکھا کہ "شاید ایک دن میں اس انجینیرنگ کی کچھ وضاحت کرنے والی ویڈیو بناؤں گا"۔

ڈچ محقق فرینک ہوگربیٹز 'ایس ایس جی ای او ایس' - سولر سسٹم جیومیٹری سروے کے سربراہ ہیں، جو ایک تحقیقی ادارہ ہے جو آسمانی اجسام کی ابھرتی ہوئی جیومیٹری اور زمین پر زلزلہ کی سرگرمیوں سے اس کے تعلق کی نگرانی پر توجہ مرکوز کرتا ہے۔

اس کی پیشین گوئیوں اور انتباہات نے دنیا بھر میں کافی خوف و ہراس پھیلا دیا، کیونکہ اس نے ان پیشین گوئیوں کو خلا میں سیاروں کے جوڑ کے حوالے سے دیکھا جاتا ہے۔ ہوگربیٹز تھیوری کے مطابق ایک "تنقیدی جیومیٹری" جو زمین کو متاثر کرتی ہے اور زلزلوں کا سبب بنتی ہے۔ وہ اسس تھیوری کا پوری قوت سے دفاع کرتا ہے۔

جہاں تک اہرام مصر کا تعلق ہے تو اسے دنیا کا ساتواں عجوبہ قرار دیا جاتا ہے۔ یہ وہ دریائے نیل کے مغربی کنارے پر جیزا گورنری میں سب سے بلند سطح مرتفع پر واقع ہیں۔ تقریباً 25 صدی قبل مسیح 2480 اور 2550 قبل مسیح کے درمیان اس کی تعمیر عمل میں لائی گئی۔ اس میں تین اہرام خوفو، خفرے اور مینکورے شامل ہیں۔

اہرام شاہی مقبرے ہیں، جن میں سے ہر ایک پر اسے تعمیر کرانے والے بادشاہ کا نام ہے۔بعد میں اسے اسی میں دفن کیا گیا تھا۔ 'اہرام خوفو' دنیا کی سب سے متنازعہ اور خیالی یادگار ہے۔ قدیم دنیا کے سات عجائبات میں سے صرف ایک ہے۔

فرعونوں کے اہرام کی شکل کائنات کی ابتدا کے خیال سے جڑی ہوئی تھی اور وہ یہ بھی مانتے تھے۔ ان کے مذہبی نوشتوں سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ اہرام مرحوم کی روح کو جنت تک پہنچانے کا ایک ذریعہ ہوگا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں