ایرانی سپریم لیڈر نے ایٹمی فائل علی شمخانی کے سپرد کردی: ذرائع کی العربیہ سے گفتگو

ایڈمرل علی شمخانی گزشتہ سال مئی تک سپریم نیشنل سیکیورٹی کونسل کے سیکرٹری رہے، 10 سال تک کونسل میں ایرانی رہنما کے نمائندہ بھی رہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک باخبر ذریعہ نے ’’العربیہ‘‘ کو بتایا ہے کہ ایرانی سپریم لیڈر نے جوہری فائل پر امریکہ کے ساتھ مذاکرات کی ذمہ داری ایرانی سپریم نیشنل سیکورٹی کونسل کے سابق سیکرٹری جنرل علی شمخانی کو سونپ دی ہے۔ اس بات کا اشارہ ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان ناصر کنعانی نے ہفتہ وار پریس کانفرنس میں دیا ہے۔

ناصر کنعانی نے پیر کو صحافیوں کے جواب میں کہا کہ میرے پاس کچھ نیٹ ورکس میں بالواسطہ الزامات کے حوالے سے آپ کے ساتھ اشتراک کرنے کے لیے مخصوص نکات نہیں ہیں۔ علاوہ ازیں بعض غیر سرکاری ذرائع سے پتہ چلتا ہے کہ ایرانی جوہری فائل گزشتہ اپریل سے ایڈمرل شمخانی کے سپرد ہے۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے اس خبر کی تردید کیے بغیر اپنے بات جاری رکھی اور کہا کہ پابندیاں ہٹانے کے لیے مذاکرات حکومت کے اعلیٰ سطح کے حکام کی رہنمائی میں ہوں گے۔ انہوں نے کہا مذاکراتی ٹیم پابندیاں اٹھانے کے لیے اپنی مشاورت جاری رکھے گی۔ یاد رہے تہران اپنے سیاسی لٹریچر میں "جوہری مذاکرات" کے جگہ "پابندیاں اٹھانے" کا جملہ استعمال کرتا ہے۔

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان ناصر کنعانی نے عمان کے وزیر خارجہ کے دورہ تہران اور امریکہ کی جانب سے پیغامات کے تبادلے کے حوالے سے کہا کہ پابندیاں ہٹانے کے لیے مذاکرات ہمیشہ جاری رہے ہیں اور اس میں کوئی رکاوٹ نہیں آئی۔ بعض مغربی میڈیا میں شائع ہونے والی خبروں کے مندرجات سے ظاہر ہوتا ہے کہ عمانی وزیر خارجہ کا امریکہ کا پیغام لائے ہیں جو درست نہیں۔

یاد رہے ایڈمرل علی شمخانی اہوازی عرب نژاد ہیں۔ وہ گزشتہ سال مئی تک سپریم نیشنل سیکیورٹی کونسل کے سیکریٹری اور دس سال تک اس کونسل میں ایرانی سپریم لیڈر کے نمائندے رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں