مستعار لینے کے 84 سال بعد ایک کتاب فن لینڈ کی ایک لائبریری کو واپس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عموما لوگ مستعار لی گئی کتاب کی واپسی پر اتنی توجہ نہیں دیتے۔ کچھ ایسا ہی فن لینڈ میں ایک کتاب کے ساتھ ہوا جو ایک لائبریری سے 84 سال قبل عاریۃً لی گئی تھی مگر کتاب لینے والا شخص اسے واپس نہیں کرسکا۔

رواں ماہ مئی میں فن لینڈ کے دارالحکومت ہیلسنکی کی ایک لائبریری سے 1939ء میں یعنی 84 سال قبل ادھار لی گئی ایک کتاب واپس کر دی گئی۔

فن لینڈ کے دارالحکومت میں لائبریرین نے بدھ کو’اے ایف پی‘ کو بتایا کہ پیر کو ہینی اسٹرینڈ کو آرتھر کونن ڈوئل کے ناول "مہاجرین" کا فننش ترجمہ ہیلسنکی میں اُدی سینٹرل لائبریری میں موصول ہوا۔

اسٹرینڈ نے کہا کہ کتاب جاری کرنے کی آخری تاریخ 26 دسمبر 1939ء تھی۔

کتاب دینے اور مستعار لینے والےشخص کے درمیان تعلق ابھی تک واضح نہیں ہوسکا۔

انہوں نے کہا کہ "مہاجرین" نامی کتاب کی واپسی میں تاخیر کی منطقی وضاحت یہ تھی کہ اس کی اجراء کی آخری تاریخ نومبر 1939ء میں سوویت یونین کے فن لینڈ پر حملہ کرنے کے ایک ماہ بعد تھی۔

اس نے کہا کہ "جس شخص نے اسے ادھار لیا تھا اس کے ذہن میں کتاب کی واپسی کے بارے میں نہیں تھا۔ جب اسے واپس کرنے کا وقت قریب آیا تو شائد وہ اسے بھول گیا تھا"۔

1893ء میں شائع ہونے والی یہ کتاب ایک تاریخی ناول ہے جس کے واقعات سترھویں صدی کے دوران فرانس میں رونما ہوئے۔ آرتھر کونن ڈوئل اپنے شرلک ہومز کے جاسوسی ناولوں کے لیے مشہور ہیں۔

اسٹرینڈ نے زور دے کر کہا کہ لائبریری 1925ء میں شائع ہونے والی کتاب کو عوام کے لیے فراہم کر سکتی ہے کیونکہ یہ اچھی حالت میں ہے۔

انہوں نے کہا کہ پرانی کتابوں کا معیار عام طور پر جدید کتابوں سے بہتر ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں