ٹرمپ ٹرائل

ہم قانون کی حکمرانی کا احترام کرتے ہیں:وائٹ ہاؤس کا ٹرمپ کےخلاف عدالتی فیصلے پر تبصرہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی وائٹ ہاؤس نے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو نیویارک کی ایک جیوری کی جانب سے سنائی گئی سزا پر رد عمل میں کہا ہے کہ وائٹ ہاؤس "قانون کی حکمرانی کا احترام کرتا ہے اور اس پر مزید کوئی تبصرہ نہیں کرتا"۔

تاہم جہاں تک اس سزا سے متعلق صدر جو بائیڈن کے ردعمل کا تعلق ہے انہوں نے اس پر کوئی رد عمل ظاہر نہیں کیا ہے۔ بائیڈن اپنے خاندان کے ہمراہ بڑے بیٹے کی موت کی نویں برسی منا رہا ہے۔

جمعرات کو ڈونلڈ ٹرمپ نیویارک کی عدالت کی طرف سے سنگین جرم کی سزا سنائی گئی ہے۔ انہیں 2016ء کے انتخابات سے قبل پورن اسٹار کا اپنے جنسی تعلقات کے حوالے سے منہ بند رکھنے کے لیے ادا کی گئی رقم کو چھپانے کے لیے جعلی دستاویزات بنانے کا مجرم قرار دیا گیا ہے۔

دو دن تک غور و خوض کے بعد 12 رکنی جیوری نے اعلان کیا کہ وہ اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ ٹرمپ ان تمام 34 الزامات میں قصوروار ہیں جن کا وہ سامنا کر رہے ہیں۔ کسی بھی مجرم کے فیصلے کے لیے اتفاق رائے ضروری تھا۔

یہ حکم پانچ نومبر کو ہونے والے صدارتی انتخابات سے پہلے ریاستہائے متحدہ کو ایک غیر معمولی صورتحال میں دھکیل سکتا ہے۔

77 سالہ ٹرمپ کسی بھی غلط کام سے انکاری ہیں۔ توقع ہے کہ وہ اس فیصلے کے خلاف اپیل کریں گے۔

اس کیس میں ٹرمپ کو زیادہ سے زیادہ چار سال قید کی سزا ہو سکتی ہے، لیکن ایسے جرم کے مرتکب افراد کو عموماً کم سزائیں ملتی ہیں یا جرمانے یا پروبیشن کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں