چین اور امارات کا دفاع اور سلامتی کے شعبوں میں تجربات کے تبادلے کے لیےتیاری پر زور

دونون ممالک کا توانائی، فوجی اور سکیورٹی کے حوالے سے تعاون اور شراکت پر اتفاق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چین کی وزارتِ خارجہ نے اتوار کے روز کہا کہ چین اور متحدہ عرب امارات نے دفاع اور سلامتی سے متعلق تجربات کے تبادلے کی تیاری پر زور دیا ہے جس کا مقصد دونوں ممالک کے فوجی اہلکاروں اور سکیورٹی اداروں کی صلاحیتوں کو اپ گریڈ کرنا ہے۔

چین نے کہا کہ فریقین نے اپنے دفاعی، فوجی اور سکیورٹی تعاون و ہم آہنگی، دونوں افواج کے درمیان بڑھتے ہوئے دوروں اور اس کے ساتھ ساتھ تربیت، نمائشوں اور سرکاری سرگرمیوں میں باہمی شرکت کو سراہا۔

یہ اعلان متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ محمد بن زاید النہیان کی چینی صدر شی جن پنگ کے ساتھ جمعرات کو بیجنگ میں دو طرفہ ملاقات کے بعد مشترکہ اعلامیہ میں کیا گیا۔

چینی مسلح افواج نے گذشتہ اگست میں چین میں متحدہ عرب امارات کے ساتھ فضائیہ کی پہلی مشقیں کیں۔ چین نے گذشتہ سال متحدہ عرب امارات کو حملہ آور طیارے برآمد کرنے کے معاہدے پر بھی دستخط کیے۔

توانائی کے حوالے سے دونوں ممالک نے اس بات پر اتفاق کیا کہ خام تیل کے ذخائر پر تعاون کے امکانات تلاش کیے جائیں اور قابلِ تجدید توانائی، تیل، قدرتی گیس، پیٹرو کیمیکل، ہنگامی مقاصد کے لیے تیل ذخیرہ کرنے، ہائیڈروجن اور امونیا میں رابطہ کاری اور تعاون کو مضبوط بنانے کے لیے چینی اور اماراتی کاروباری اداروں کی حوصلہ افزائی اور مدد کی جائے۔

دونوں ممالک کی نظریں جوہری توانائی کے مشترکہ منصوبوں بشمول جوہری بجلی گھروں کی تعمیر اور مزید تحقیق و ترقی پر بھی مرکوز ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں