جرمنی میں دائیں بازو کا سیاست دان چاقو حملے میں زخمی، ہسپتال منتقل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جرمن خبر رساں ادارے نے اطلاع دی ہے کہ ملک کے جنوب مغرب میں واقع شہر مانہایم میں ایک جرمن انتہائی دائیں بازو کی جماعت کا ایک رکن چاقو کے حملے میں زخمی ہوگیا۔ اسی شہرمیں چند روز پیشتر ایک پولیس افسر ہلاک اور 5 دیگر افراد ایسے ہی پرتشدد حملے کے نتیجے میں زخمی ہوگئے تھے۔

چاقو مارنے کا واقعہ منگل کو دیر گئے اسی شاپنگ پلازہ کے قریب پیش آیا جہاں اس سے قبل جمعہ کو حملہ ہوا تھا۔

جرمن خبر رساں ادارے نے رپورٹ کیا کہ انتہائی دائیں بازو کی الٹرنیٹو فار جرمنی پارٹی کے ایک امیدوار نے انتخابی پوسٹر پھاڑنے کی کوشش کرنے والے ایک شخص کو پکڑ لیا۔ اس شخص نے بعد میں سیاست دان پر چاقو سے وار کیا۔

زخمی سیاسی کارکن کو علاج کے لیے ہسپتال منتقل کیا گیا ہےجہاں اس کی حالت خطرے سے باہر بیان کی جاتی ہے۔

اتوار کو بلدیاتی انتخابات کی مہم چلانے والے امیدوار کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی۔

مانہایم پولیس نے تصدیق کی کہ حملہ منگل کی رات ہوا تھا اور کہا کہ وہ مزید تفصیلات کا اعلان بعد میں کریں گے۔

جمعہ کے روز ایک 25 سالہ افغان شخص نے ایک ایسے گروپ کے متعدد ارکان کو چاقو کے وار کر دیا جو خود کو "سیاسی اسلام" کے مخالف سمجھتے ہیں۔

’پاکس یورپ خود کو ایک ایسی تنظیم کے طور پر بیان کرتی ہے جو عوام کو ’سیاسی اسلام‘ کے بڑھتےپھیلاؤ اور اثر و رسوخ سے لاحق خطرات سے آگاہ کرنے کے لیے کام کر رہی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں