پوتین بدتمیز اور ڈکٹیر ہے: بائیڈن، روسی صدر بدتمیزی کا جواب نہیں دیتے: کریملن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

چند روز قبل یوکرین کو روس میں امریکی ہتھیاروں کے استعمال کی اجازت دینے کے بعد امریکی صدر جو بائیڈن نے دارالحکومت ماسکو یا کریملن پر ایک مرتبہ پھر کڑی تنقید کی ہے۔ بدھ کی رات کے روسی صدر پوتین کے بیانات، کہ روسی سرزمین پر حملے کرنے کے لیے یوکرین کو اعلیٰ درستی والے ہتھیار فراہم کرنا اس جنگ میں براہ راست شرکت ہے، کے متعلق پوچھے جانے والے سوال پر بائیڈن نے جواب دیا کہ پوتین بدتمیز اور ڈکٹیٹر ہے۔

بائیڈن نے اے بی سی نیوز کے ساتھ انٹرویو میں مزید کہا کہ میں پوتین کو 40 سال سے زیادہ عرصے سے جانتا ہوں، وہ 40 سال سے میرے لیے پریشان کن ہے، وہ ایک آمر ہے۔ وہ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے جدوجہد کر رہا ہے کہ جب تک جنگ جاری رہے تو وہ اپنے ملک کو ساتھ رکھے۔

بیلیسٹک میزائل
بیلیسٹک میزائل

جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا امریکی ساختہ ہتھیار روس میں پہلے ہی استعمال ہو چکے ہیں جب سے انہوں نے ان کے استعمال پر دستخط کیے ہیں۔ صدر نے براہ راست جواب نہیں دیا لیکن واضح کیا کہ انہیں روسی دارالحکومت یا حکومت کی نشست کو نشانہ بنانے کے لیے استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

جمعرات کو کریملن کے ترجمان دمتری پیسکوف نے امریکی صدر جو بائیڈن کے روسی صدر پوتین کے خلاف جارحانہ بیانات پر العربیہ کو جواب دیتے ہوئے کہا کہ امریکی صدر کے الفاظ صرف ان کی ساکھ کو نقصان پہنچاتے ہیں۔ دمتری پیسکوف نے مزید کہا کہ پوتین بدتمیزی کا جواب نہیں دیتے ہیں۔ پیسکوف نے العربیہ اور الحدث کو اپنے بیانات میں مزید کہا کہ پوتین اس قسم کی گستاخی کا جواب نہیں دیتے اور وہ ایسا نہیں کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں