.

ترکی نے شامی ائر لائنز کا مسافر جہاز زبردستی انقرہ اتار لیا

جہاز پر مشکوک سامان کی اطلاع پر اقدام کیا گیا: ترک حکام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
ترک فضائیہ نے بدھ کی رات ماسکو سے دمشق کے لئے محو پرواز شامی ایئر لائن کے مسافر طیارے کو زبردستی انقرہ اترنے پر مجبور کر دیا۔

سرکاری نیوز ایجنسی 'اناطولیہ' کے مطابق شامی جہاز کو اسلحہ لیجانے کے شبہے میں انقرہ اتارا گیا۔ واقعے کے بعد خبر رساں ادارے نے ترک وزیر خارجہ کا ایک بیان نقل کیا ہے جس میں انہوں نے کہا: "ہمیں اطلاع ملکی تھی کہ شامی مسافر جہازوں میں سول ایوی ایشن کے قواعد و ضوابط کا خیال نہیں رکھا جا رہا، انہیں اسلحہ کی نقل و حمل کے لئے استعمال کیا جا رہا ہے۔" انہوں نے مزید تفصیل بتائے بغیر کہا: "اگر کسی جہاز پر اسلحہ ملا تو وہ بین الاقوامی قانون لاگو کرنے میں تامل نہیں کریں گے۔"

اناطولیہ کے مطابق ترکی ائر فورس کے چار ایف4- لڑاکا جہازوں نے ماسکو سے دمشق کے لئے محو پرواز شامی ائر لائنز کے طیارے کا پیچھا کیا۔ طیارے پر 35 مسافر سوار تھے۔ اسے مار گرانے کی وارننگ دیکر ترک ہوابازوں نے انقرہ میں 'آسنبوگا' کے ہوائے اڈے پر اتار لیا۔

ترک چینل "ٹی این وی" کا کہنا ہے کہ شامی ائر لائن کی ملکیتی ایئر بس 320 - کو ترک حکام نے گرینچ کے معیاری وقت کے مطابق 14:30 بجے روکا۔ طیارہ اترنے کے بعد اس کی مکمل تلاشی لی گئی۔

ادھر ترک فضائی کمپنیوں نے شامی حکام کی جانب سے اس اقدام پر انتقامی کارروائی کا نشانہ بننے سے بچنے کی خاطر اپنے ہوائی جہازوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ شامی فضائی حدود میں داخل ہونے سے گریز کریں۔

درایں اثنا شامی ٹی وی نے اپنے مسافر جہاز کی ترکی میں زبردستی لینڈنگ کرانے سے متعلق خبر دیتے ہوئے کہا ہے کہ جہاز پر سوار تمام مسافر بخریت ہیں۔ چند دن قبل شام سے فائر کئے راکٹ ترک علاقے میں گرنے سے پہنچنے والے نقصان کے بعد انقرہ اور دمشق کے تعلقات انتہائی کشیدگی اختیار کر چکے ہیں۔ ترک فوج نے بھی فوری طور پر شام کو ان راکٹ حملوں کا جواب دیا ہے۔