.

جنرل وسام کی بیوہ کا ایرانی سفیر سے مصافحہ کرنے سے انکار

نمائندہ تہران کی تعزیت قبول کرنے سے معذرت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
لبنان کے مقتول بریگیڈئر جنرل وسام الحسن کی بیوہ آنا الحسن نے بیروت میں ایران کے سفیر غضنفر رکن آبادی سے اپنے شوہر کے قتل پر کی جانے والی تعزیت قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ آنا الحسن نے ایرانی سفیر کا مصافحے کے لئے بڑھایا جانے والا ہاتھ جھٹک دیا، جس سے غضنفر رکن آبادی کو انتہائی خفت کا سامنا کرنا پڑا۔

لبنانی ویب سائٹس نے وسام الحسن کی بیوہ کی تصاویر شائع کیں ہیں جس میں انہیں ایرانی سفیر کی موجودگی میں گم سم بیٹھے دکھایا گیا ہے۔ ایرانی سفیر ان سے مصافحے کے لئے ہاتھ بڑھاتے ہیں لیکن وہ کسی طور پر ٹس سے مس نہیں ہوتیں۔ ان کا یہ جچا تلہ رویہ اس بات کی غمازی کرتا ہے کہ وہ لبنانی اپوزیشن کی طرح ایران اور شام نواز قوتوں کو اپنے شوہر کا قاتل سمجھتی ہیں۔

یاد رہے کہ وسام الحسن لبنان میں جنرل ڈائریکٹوریٹ داخلی سلامتی کے شعبہ اطلاعات کے سربراہ تھے۔ ان کی نگرانی میں اسرائیل کے لئے جاسوسی کرنے والے تقریبا تیس خفیہ نیٹ ورکس کو بے نقاب کیا گیا۔

وسام الحسن لبنان کے سابق وزیر اعظم رفیق الحریری کے مقربین خاص افراد میں شامل تھے۔ حریری خاندان انہیں شامی حکومت اور لبنان میں ایرانی نفوذ کا سب سے بڑا دشمن سممجھتی تھی۔