.

اسد حکومت کے دن گنے جا چکے ہیں نبیل العربی

'اپوزیشن اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کرے'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
عرب لیگ کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹر نبیل العربی نے کہا ہے کہ شام میں صدر بشار الاسد کی حکومت کا خاتمہ اب نوشتہ دیوار ہے۔ ایک نئے شام کی تعمیر و ترقی کے لیے اپوزیشن قوتوں کو اپنی صفوں میں اتحاد اور یکجہتی پیدا کرنا ہو گی۔



دوحہ روانگی سے قبل قاہرہ ہوائی اڈے پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر نبیل العربی نے کہا کہ موجودہ شامی حکومت زیادہ دیر تک نہیں چل سکتی۔ اسے جلد ختم ہونا ہے۔ قطر میں شامی اپوزیشن کے اکٹھ سے متعلق سوال پر عرب لیگ کے سربراہ نے کہا کہ دوحہ اجلاس کی کامیابی کے لیے ضروری ہے کہ شامی اپوزیشن اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کرے۔ انہوں نے کہا کہ "نئے شام کی تعمیر کی تیاری کرنی چاہیے اور یہ عظیم کام قومی اتحاد اور یگانگت کے بغیر ناممکن ہے۔"



خیال رہے کہ شامی اپوزیشن جماعتوں کا ایک اہم اجلاس قطر کے دارالحکومت دوحہ میں ہونے جا رہا ہے۔ اجلاس میں عرب ممالک کے وزراء خارجہ، ترک وزیر خارجہ احمد داؤد اوگلو اور شام کے دیگر دوست ممالک کے مندوبین شرکت کریں گے۔ اس اجلاس کا مقصد شام میں قومی عبوری حکومت کی تشکیل کا طریقہ کار وضع کرنا ہے۔



ڈاکٹر نبیل العربی نے کہا کہ عرب لیگ پچھلے دو برسوں سے شامی اپوزیشن کی صفوں میں اتحاد کے لیے کوشاں ہے۔ دوحہ اجلاس شامی اپوزیشن قوتوں کو نہ صرف ایک پلیٹ فارم پر جمع کرنا ہے بلکہ شام میں مستقبل کے عبوری دور کے لیے ملکی انتظام و انصرام کا طریقہ کار وضع کرنا ہے۔

قومی کونسل کی نئی قیادت کا انتخاب

ادھر دوحہ اجلاس کے موقع پر شام میں قومی عبوری کونسل کی نئی قیادت کے انتخاب کا مرحلہ بھی طے کیا جائے گا۔ کونسل کے 40 اراکین کا 400 رہنماؤں میں سے چناؤ عمل میں لایا جائے گا جن میں کونسل کے ممبران اور جنرل سیکرٹری اور جنرل باڈی شامل ہو گی۔

گزشتہ برس جون میں اپوزیشن رہ نما عبدالباسط سیدا کو قومی عبوری کونسل کا سربراہ مقرر کیا گیا تھا۔ کونسل کے نئے انتخابات میں سیکرٹری جنرل اور ایگزیکٹو کمیٹی کے گیارہ ارکان بھی شامل ہوں گے۔

خیال رہے کہ شام میں اس وقت اپوزیشن جماعتوں کے مجموعی طور پر29 گروپ سامنے آئے ہیں جن کی سرکردہ قیادت کی تعداد چار سو سے زیادہ ہے۔ ان میں اسلام پسند، سیکولر، اقلیتوں کے نمائند اور قبائلی گروپ شامل ہیں۔