.

مصری فضائی میزبان پہلی مرتبہ حجاب پہن سکیں گی

ائر لائن حجاب کا ڈیزائن تیار کروا رہی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مصر کی قومی فضائی کمپنی کے نائب چیئرمین عبدالعزیز فاضل نے کہا ہے کہ ائر لائن کی عرب ممالک کے لئے پروازوں پر فضائی میزبان خواتین حجاب پہن کر اپنے فرائض سر انجام دے سکیں گی۔

اس فیصلے کے بعد سابق صدر حسنی مبارک کے دور میں عائد پابندی ختم ہو جائے گی اور جلد ہی ائر لائن کی دوسری منزلوں کے پروازوں پر بھی حجاب پہننے کی اجازت دے دی جائے گی۔

عبدالعزیز نے بتایا کہ ائر لائن حجاب کا نیا ڈیزائن بنوا رہی ہے جو خاتون فضائی میزبان عرب دنیا کے علاوہ دوسرے ملکوں کے لئے قومی فضائی کمپنی کی پروازوں پر پہن سکیں گی۔

انہوں نے بتایا کہ حجاب پہننا فضائی میزبانوں پر لازم نہیں ہو گا بلکہ جو عملہ اسے آزادانہ طور پر اپنی وردی کا حصہ بنائے گا، اس کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔ ابتدا میں مصری قومی فضائی کمپنی کی جدہ اور مدینہ کے لئے پروازوں پر ڈیوٹی انجام دینے والی خواتین میزبان سرپوش اوڑھ سکیں گی، جس کی اجازت مرحلہ وار دوسرے عرب ملکوں کے لئے پروازوں پر بھی دے دی جائے گی۔

اس اقدام سے پہلے مصر کے سرکاری ٹی وی پر خواتین نیوز اینکرز نے بھی حجاب پہن کر اپنے فرائض سر انجام دیئے ہیں۔ مصر میں خواتین کی بڑی اکثریت حجاب اوڑھتی ہیں لیکن صدر مبارک کے دور میں اس کلچر کو قومی اداروں میں فروغ پانے سے روکنے کے لئے خواتین عملے کو دوران ڈیوٹی حجاب کرنے کی اجازت نہیں دی تھی۔

یاد رہے کہ مصر کے موجودہ صدر ڈاکٹر محمد مرسی متعدد مرتبہ یہ یقین دہانی کرا چکے ہیں کہ ان کی حکومت کسی بھی ادارے کے لئے مخصوص لباس یا سکوک متعین نہیں کرے گی۔ ملک کے لبرل حلقوں بالخصوص مسیحیوں کو معاشرتی قیود پر بہت زیادہ اعتراض ہے۔