.

غزہ پر اسرائیلی حملہ، مصر نے تل ابیب سے سفیر واپس بلا لیا

سیکیورٹی کونسل کا ہنگامی اجلاس بلانے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مصر نے بدھ کے روز غزہ پر اسرائیلی حملے پر احتجاج کرتے ہوئے تل ابیب سے اپنے سفیر عاطف سالم کو واپس بلوا لیا ہے۔ ان حملوں میں حماس کے عسکری ونگ کے سربراہ سمیت دس فلسطینی شہری شہید ہوئے ہیں۔

مصری صدر ڈاکٹر محمد مرسی نے ساری صورتحال کا جائزہ لینے کے لئے فوری طور پر عرب وزرائے خارجہ کا اجلاس بلانے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے یو این میں مصر کے مستقبل مندوب کو بھی ہدایت کی ہے کہ وہ اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کا فوری اجلاس بلوانے کے لئے عالمی ادارے میں درخواست دیں۔

ایوان صدر کے ترجمان ڈاکٹر یاسر علی نے بتایا کہ ڈاکٹر مرسی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ مصر، غزہ پر اسرائیلی جارحیت کے بعد پیدا ہونے والے صورتحال پر بحث کو کشیدگی کو مزید بڑھنے سے روکنے کے لئے تمام علاقائی اور عالمی فورمز متحرک کر رہے ہیں۔

بیان میں مصری صدر نے وزارت خارجہ کو ہدایت کی ہے کہ وہ قاہرہ میں اسرائیلی سفیر کو دفتر خارجہ طلب کریں اور ان سے نہتے فلسطینیوں پر بلا اشتعال حملوں پر شدید احتجاج کریں۔ اسرائیل کے چینل 10 نے ایک رپورٹ میں بتایا کہ قاہرہ نے تل ابیب سے غزہ حملے فوری طور پر روکنے کے لئے زور دیا تاہم اسرائیل نے مصر کا یہ مطالبہ ماننے سے انکار کر دیا ہے۔

مصر نے غزہ پر اسرائیلی حملوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ اگر صورتحال پر بروقت قابو نہ پایا گیا تو اس خطے کی سیکیورٹی کے لئے اس کے مضمرات اچھے نہیں ہوں گے۔

ادھر برطانیہ نے بھی ایک بیان میں فریقین پر زور دیا ہے کہ وہ ضبط نفس سے کام لیں تاکہ غزہ میں کشیدگی کی صورتحال پر جلد سے جلد قابو پایا جائے۔ اقوام متحدہ کے جنرل سیکرٹری کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ عالمی ادارے کے سربراہ نے اسرائیل اور حماس سے اپیل کی ہے کہ وہ غزہ میں تشدد رکوانے میں اپنا کردار ادا کریں۔ انہوں نے دونوں فریقین پر زور دیا ہے کہ وہ عام شہریوں کی سلامتی کو یقینی بنائیں۔