.

اسرائیل کا غزہ میڈیا کمپاؤنڈ پر حملہ، العربیہ کا دفتر بھی متاثر

تل ابیب، القدس سمیت دوسرے شہروں پر القسام نے 900 راکٹ فائر کئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی لڑاکا جہازوں نے غزہ میں ایک کمپاؤنڈ کو گولا باری کا نشانہ بنایا ہے جس میں العربیہ ٹی وی سمیت دوسرے ذرائع کے دفاتر واقع ہیں۔ شہر کے مرکز میں واقع برج الشو پر اسرائیلی توپخانے نے تین میزائل فائر کئے۔

العربیہ کی نامہ نگار کے مطابق حملے میں بارہ منزلہ عمارت کو نقصان پہنچا۔ عمارت کے مختلف حصوصن کو عرب اور غیر ملکی میڈیا اپنے دفاتر اور مشہور وکلاء اپنے چیمبرز کے طور پر استعمال کر رہے ہیں۔ غزہ کے وسط میں واقع یہ عمارت مقامی اور بین الاقوامی طور پر میڈیا کمپاؤنڈ کے طور پر جانی پہنچانی جاتی ہے۔ چوبیس گھنٹے عمارت کے باہر میڈیا کی ڈی ایس این جی وینز اور دوسری ٹرانسپورٹ موجود ہوتی ہے جس سے عمارت کی بخوبی شناخت ہوتی ہے۔
حنان المصری نے کہا کہ عمارت میں کوئی مزاحمت کار یا مسلح فرد موجود نہیں تھا لیکن اس کے باوجود اسرائیل نے اس پر گولا باری کی۔ ایمبولینس گاڑیاں اور شہری دفاع کا عملہ زخمیوں کو اہسپتال پہنچانے فوری طور پر جائے حادثہ پر پہنچ گیا اور امدادی کارروائیاں شروع کر دیں۔

درایں اثنا اسرائیلی ذرائع نے بتایا کہ اسرائیل کے لڑاکا طیاروں نے ہفتے کے روز غزہ کے مختلف علاقوں پر 300 حملے کئے۔ بمباری میں اور فضائی حملوں میں غزہ میں فلسطین کی مستعفی حکومت کے دفاتر کو نشانہ بنایا گیا۔ انہی ذرائع نے یہ بھی دعوی کیا کہ ایک حملے میں عزالدین القسام کے ائر ڈیفنس شعبے کے کمانڈر اسامہ القاضی بھی شہید کر دیئے گئے۔

ادھر غزہ سے ہفتے کے روز داغے جانے والے میزائلوں کی تعداد انہی ذرائع نے 165 بتائی ہے۔ ان میزائیلوں کی بڑی تعداد اسرائیل کے جنوبی علاقے مغربی صحرائے نقب میں گری۔

اسرائیل میں نصب میزائل شکن 'آئرن ڈوم سسٹم' نے 36 میزائیلوں کو فضا ہی میں تباہ کر دیا۔ تباہ کئے جانے والے میزائلوں میں تل ابیب پر فائر کئے گئے 'فجر 5' طرز کے میزائل بھی شامل تھے۔ 'دھویں کے ستون' کوڈ نام سے جاری اسرائیلی آپریشن کے آغاز سے ابتک آئرن ڈوم میزائل شکن سسٹم غزہ سے فائر کردہ تین سو میزائل تباہ کر چکا ہے۔

حماس کے عسکری شعبے کے عزالدین القسام کے ترجمان کا کہنا ہے کہ اس کے جنگجوؤں نے تل ابیب اور بیت المقدس سمیت اسرائیل کے مختلف شہروں پر 900 حملے کئے۔ ترجمان ابوعبیدہ نے دعوی کیا کہ ان کے القسام ائر ڈیفنس یونٹ نے اسرائیلی لڑاکا طیارہ بھی مار گرایا جو غزہ سے متصل سمندر میں جا گرا۔ نیز حماس نے دو بغیر پائیلٹ اسرائیلی ڈرونز بھی مار گرانے کا دعوی کیا ہے۔

ابوعبیدہ نے مزید کہا کہ القسام نے بتایا کہ ہم نے اسرائیل کے اہم اور حساس مقامات کو نشانہ بنایا ہے۔ ان میں بری اور فضائی فوج کے بیس اسٹیشن اور ہیلی پیڈز شامل ہیں۔ ہمارے حملوں کے خوف سے پانچ ملین اسرائیلی شہری زیر زمین بنکروں اور مخفوظ پناہ گاہوں میں رہنے پر مجبور ہیں۔ نیز القسام نے ہفتے کے روز غوش عتصیون کے اہم فوجی مرکز کو بھی میزائل حملے سے نشانہ بنایا۔

القسام کے میڈیا ترجمان ابو عبیدہ نے دعوی کیا کہ اس کے مجاہدین نے غزہ کی پٹی سے تین کلومیٹر دور ایک فوجی جیب گھات لگا کر تباہ کی۔ حملے کے بعد اسرائیلی امدادی پارٹیاں گھنٹوں کی تاخیر سے جائے حادثہ پر پہنچ سکیں۔