.

اخوان المسلمون کا منگل کو صدر کی حمایت میں ملک گیر مظاہروں کا اعلان

حکومت کے حامیوں اور مخالفین میں جھڑپیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مصر میں صدر ڈاکٹر محمد مرسی کی جانب سے اختیارت حاصل کرنے کے صدراتی حکم کے خلاف اٹھنے والا تنازع شدت اختیار کرتا جا رہا ہے۔ اپوزیشن کی جانب سے احتجاج کے بعد حکمراں جماعت اخوان المسلمون نے بھی منگل کے روز صدر کی حمایت میں ملک گیر مظاہروں کی کال دی ہے۔ ادھر اپوزیشن جماعتوں نے بھی منگل کو تحریر اسکوائر اور ملک کے دیگر شہروں میں حکومت مخالف ریلیاں نکالنے کا اعلان کر رکھا ہے۔

اخوان المسلمون کے ویب پورٹل پر جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ فریڈم اینڈ جسٹس پارٹی صدر کے تمام حالیہ فیصلوں کی بھرپور تائید کرتی ہے اور اس سلسلے میں منگل کے روز عابدین گراؤنڈ میں ایک ملین لوگوں کو جمع کیا جائے گا۔ خیال رہے کہ العابدین قاہرہ میں گراؤنڈ تحریر اسکوائر سے چند سو میٹر کے فاصلے پر ہے۔ اپوزیشن کے احتجاج کی صورت میں حکومت کے حامیوں اور مخالفین کے درمیان کشیدگی کا بھی خطرہ ہے۔

اخوان المسلمون نے آج بعد نماز مغرب صدر کی حمایت میں مختلف مقامات پر احتجاجی جلسے منعقد کرنے کا اعلان کیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ صدر ڈاکٹر محمد مرسی نے دستور ساز کونسل کی مدت میں توسیع، مجلس شوریٰ کو تحفظ فراہم کرنے اور اپنے تمام سابقہ فیصلوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے جو بھی اعلانات کیے ہیں، آئین کی رو سے درست ہیں اور جماعت ان کی بھرپور حمایت کرتی ہے۔ اپوزیشن کا واویلا بلا جواز ہے۔

ادھر ہفتے کے روز قاہرہ میں ہائی کورٹ کے باہر صدر کے حامیوں اور مخالفین میں جھڑپیں ہوئیں، جس کے بعد سیکیورٹی حکام کو مداخلت کرنا پڑی۔ پولیس نے مظاہرہن کو منتشر کرنے کے لیے اشک آور گیس کی شیلنگ کی اور ان پر لاٹھی چارج کیا۔