.

عراقکرکوک میں پے درپے بم دھماکے،8 ہلاک ،40 زخمی

صوبہ دیالا میں صدر طالبانی کی جماعت کے دفتر پر کار بم حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
عراق کے شمالی شہر کرکوک میں اہل تشیع کی دوعبادت گاہوں کے باہر پے درپے بم دھماکوں اور صوبہ دیالا میں ایک کرد سیاسی جماعت کے دفتر پر کار بم حملے کے نتیجے میں آٹھ افراد ہلاک اور چالیس سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق کرکوک شہر میں اہل تشیع کی ایک مسجد کے نزدیک شاہراہ پر نصب تین بموں کے دھماکے ہوئے ہیں اور ایک ٹیلی ویژن چینل کے نزدیک بارود سے بھری ایک کار کو دھماکے سے اڑا دیا گیا۔اسی جگہ ایک اور بم پھٹنے سے دھماکا ہوا ہے۔

کرکوک کے محکمہ صحت کے سربراہ عمر صدیق کا کہنا ہے کہ ان بم دھماکوں میں چھے افراد ہلاک اور تیس زخمی ہوئے ہیں لیکن ایک پولیس عہدے دار نے بم حملوں میں ہلاکتوں کی تعداد زیادہ بتائی ہے اور کہا ہے کہ ان میں دس افراد ہلاک ہوئے ہیں۔فوری طور پر کسی گروپ نے عراق کے تیل کی دولت سے مالامال اس شہر میں بم حملوں کی ذمے داری قبول نہیں کی۔

قبل ازیں اتوار کو صوبہ دیالا کے شہر جلوَلہ میں عراقی صدر جلال طالبانی کی جماعت پیٹریاٹک یونین آف کردستان (پی یو کے) کے ہیڈکوارٹرز پر کار بم حملہ کیا گیا۔اس وقت وہاں کرد سکیورٹی فورسز میں بھرتی کے لیے بڑی تعداد میں لوگ جمع تھے۔بم دھماکےکے نتیجے میں دوافراد ہلاک اور تیرہ زخمی ہو گئے ہیں۔