.

جیش الحر نے حلب میں 3 ہوائی اڈوں کا محاصرہ کر لیا

سرکاری فوج کی جنوبی دمشق پر بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
شامی شہر حلب میں ایک فوجی کمانڈر نے دعوی کیا ہے کہ اپوزیشن سے تعلق رکھنے والے جنگجوؤں پر مشتمل جیش الحر نے شہر کے تین ہوائی اڈوں سمیت ایئرفورس انٹلیجنس دفتر کا محاصرہ کر لیا ہے۔ جیش الحر کے محاصرے میں آنے والے ہوائی اڈوں میں النیرب، کویرس اور منغ شامل ہیں۔

ادھر شامی فوج نے دمشق کی جنوبی کالونیوں کے علاوہ حلف، ادلب اور حمص میں توپخانے سے گولا باری کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے۔ ایک روز قبل کی جانے والی خونریز کارروائیوں میں 160 افراد ہلاک ہوئے جن کی بڑی تعداد دمشق اور اس کے مضافات، حمص اور حلب شہر سے تعلق رکھتی تھی۔ انسانی حقوق کی آبزرویٹری کے مطابق حمص کے نواحی شہر تلبیسہ میں بیکری پر گولا باری میں ایک دن قبل تین سو افراد مارے گئے تھے۔

شمالی شام کی حلب گورنری میں فوجی کونسل کے سربراہ بریگیڈئر عبدالجبار العکیدی نے خبر رساں ادارے 'رائیٹرز' کو بتایا ان کی زیر کمان لڑنے والے جنگجوؤں کو شامی فضائیہ کے لڑاکا طیاروں کا مقابلہ کرنے میں مشکلات پیش آ رہی ہیں کیونکہ حلب میں تین محاصرہ زدہ ہوائی اڈوں سے لڑاکا طیارے پرواز کر رہے ہیں۔

حلب کے گرد و نواح میں 25 سے 30 ہزار جنگجوؤں کی کمان کرنے والے بریگیڈئر العکیدی نے بتایا محاصرے سے ایئربیس کو سپلائی منقطع ہونے پر وہاں سے فوجیوں کے منحرف ہونے کی امید ہے۔ اس کے بعد جیش الحر ان ہوائی اڈوں پر بہ آسانی حملے کر سکے گی۔

اس سے قبل شامی رضاکاروں نے بتایا کہ جیش الحر حلب کے نواحی منغ ایئرپورٹ پر انٹلیجنس دفتر پر قبضہ کر لیا، جس کے بعد مزید کمک کے ذریعے ہوائی اڈے کے ایک حصے پر حملہ کیا گیا جس کے نتیجے میں سرکاری فوج کے متعدد اہلکار مارے گئے جبکہ ایئرپورٹ کی حدود میں متعدد گاڑیوں کو شدید نقصان پہنچا۔