.

شامی فوج گینگ میں تبدیل ہو چکی منحرف میجر جنرل

اسدی فوج عوام کا قتل عام کر رہی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
شام کے ایک منحرف میجر جنرل عبدالعزیز جاسم الشلال کا کہنا ہے کہ صدر بشار الاسد کی وفادار فوج ایک گینگ میں تبدیل ہو چکی ہے۔ وہ شامی عوام کو دہشت زدہ کرنے کے علاوہ ان کا قتل عام کر رہی ہے۔

انھوں نے یہ بات منگل کو العربیہ کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں کہی ہے۔ میجر جنرل عبدالعزيز جاسم الشلال صدر بشار الاسد کی فوج کو اب تک خیرباد کہنے والے سب سے سنئیر عہدے دار ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ''شامی عوام نے ابتداء میں سڑکوں پر آ کر پُرامن انداز میں مظاہرے شروع کیے تھے اور حکومت سے آزادیاں دینے کا مطالبہ کیا تھا لیکن شامی فوج نے ان کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر دیا، وہ ایک گینگ میں تبدیل ہو گئی اور اس نے لوگوں کو دہشت زدہ کرنے کے علاوہ ان کا قتل عام شروع کر دیا۔ ان کے دیہات اور شہر اجاڑ دیے''۔

انھوں نے شام اور ترکی کے درمیان سرحدی علاقے سے العربیہ سے گفتگو کی ہے۔ انھوں نے بتایا کہ کہ وہ بہت پہلے شامی فوج کو خیرباد کہنا چاہتے تھے لیکن اس کے لیے سازگار حالات کا انتظار کرتے رہے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ ''شامی فوج کے اور بھی بہت سے اعلیٰ افسر منحرف ہونا چاہتے ہیں لیکن ان کے منحرف ہونے کے لیے صورت حال مناسب نہیں کیونکہ شامی حکومت کی سخت نگرانی کی وجہ سے وہ ایسا نہیں کر سکتے ہیں''۔

منحرف میجر جنرل نے بتایا کہ اس وقت ملک کے بڑے علاقے پر باغی جنگجوؤں اور فوجیوں پر مشتمل جیش الحر کا کنٹرول قائم ہو چکا ہے۔ انھوں نے خبردار کیا کہ اسدی فوج خطرے کی صورت میں مخالفین کے خلاف کیمیائی ہتھیار بھی استعمال کر سکتی ہے۔

کچھ عرصہ قبل شامی فوج کی جانب سے وسطی شہر حمص میں باغی جنگجوؤں کے خلاف زہریلی گیسوں کے استعمال کی اطلاعات منظر عام پر آئی تھیں لیکن اس کا کوئی ثبوت نہیں ملا تھا۔ تاہم میجر جنرل الشلال نے بتایا کہ وہاں کیمیائی ہتھیار استعمال کیے گئے تھے۔