.

مصر مبارک دور کی سینیٹ کے سربراہ ضمانت پر رہا

صفوت الشریف گذشتہ اٹھارہ ماہ سے جیل میں قید تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مصر کی ایک عدالت نے سابق صدر حسنی مبارک کے دور میں پارلیمان کے ایوان بالا سینیٹ کے سابق چئیرمین صفوت الشریف کو ضمانت پر جیل سے رہا کرنے کا حکم دیا ہے۔

وہ گذشتہ اٹھارہ ماہ سے جیل میں قید تھے اور ان کے خلاف بدعنوانیوں اور اختیارات کے ناجائز استعمال کے الزامات میں مقدمہ چلایا جا رہا ہے۔ مصر کی سرکاری خبر رساں ایجنسی مینا کی اطلاع کے مطابق انھیں آٹھ ہزار ایک سو مصری پاؤنڈز کے عوض ضمانت پر رہا گیا ہے۔

صفوت الشریف سابق صدر کی جماعت (اب کالعدم) نیشنل ڈیموکریٹک پارٹی کے سرکردہ عہدے دار تھے اور وہ سابق صدر کے ان مصاحبین میں سے ایک ہیں جن کے خلاف کرپشن اور اختیارات کے ناجائز استعمال کے الزامات میں مقدمات چلائے جا رہے ہیں۔

اکتوبر میں قاہرہ کی ایک عدالت نے انھیں گذشتہ سال کے اوائل میں سابق صدر کے خلاف عوامی احتجاجی تحریک کے دوران قاہرہ میں مظاہرین پر گھوڑے اور اونٹ چڑھانے کے الزام میں قائم مقدمے میں بری کر دیا تھا۔

سابق صدر حسنی مبارک بہ ذات خود قریباً ساڑھے آٹھ سو مظاہرین کی ہلاکتوں کے جرم میں عمر قید کی سزا بھگت رہے ہیں۔ وہ اپنی سزا کے خلاف اپیل دائر کرنے والے ہیں اور عدالت تیرہ جنوری کو ان کے خلاف مقدمے کی دوبارہ سماعت کے بارے میں کوئی فیصلہ کرے گی۔

واضح رہے کہ سابق صدر اور ان کے متعدد وزراء کو بدعنوانیوں اور اختیارات کے ناجائز استعمال پر مختلف مقدمات میں قید اور جرمانے کی سزائیں سنائی جاچکی ہیں اور وہ اس وقت ملک کی مختلف جیلوں میں اپنے کیے کی سزا بھگت رہے ہیں۔