.

حزب اللہ نے بلغاریہ بم حملے پر اسرائیلی مہم کی مذمت کر دی

صہیونی ریاست نے مذموم عالمی مہم شروع کر رکھی ہے: نعیم قاسم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان کی سیاسی و عسکری تنظیم حزب اللہ نے اسرائیل پر الزام عاید کیا ہے کہ اس نے بلغاریہ میں بم دھماکے کو جواز بناکر اس کے خلاف ایک بین الاقوامی مہم شروع کر رکھی ہے۔

حزب اللہ کے نائب سربراہ نعیم قاسم نے بدھ کو ایک بیان میں اسرائیل کی جانب سے عالمی سطح پر اپنی تنظیم کے خلاف جاری مہم کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ ان کی جماعت آلات اور تربیت میں ترقی کر رہی ہے اور اس پر عاید کردہ الزامات سے کچھ بھی تبدیل نہیں ہو گا۔

درایں اثناء بلغاریہ کے وزیر خارجہ نیکولے ملیدنوف نے خبردار کیا ہے کہ برگاس میں بم دھماکے میں حزب اللہ کے ملوث ہونے کا معاملہ مضمرات کے بغیر نہیں رہنے دیا جائے گا۔

بلغاری وزیر خارجہ نے العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کا معاملہ زیر غور ہے لیکن ان کی حکومت کسی ٹھوس ثبوت کے بغیر کوئی سرکاری بیان جاری نہیں کرے گی۔

بلغاریہ کی حکومت نے گذشتہ روز چھے ماہ کی تحقیقات کے بعد لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ پر ملک میں جولائی 2012ء میں ایک بس پر خودکش بم حملے میں ملوث ہونے کا الزام عاید کیا تھا۔ لبنانی وزیر اعظم نجیب میقاتی نے اس واقعے کے ضمن میں تحقیقات اور اس حملے کے پس پردہ محرکات اور حالات کو منظر عام پر لانے کے لیے بلغاریہ کے ساتھ تعاون کی پیش کش کی تھی۔

اسرائیل اور امریکا نے واقعہ سے متعلق بلغاریہ کی تحقیقاتی رپورٹ سامنے آنے کے بعد یورپی یونین سے حزب اللہ کے خلاف کارروائی اور اسے دہشت گرد تنظیم قرار دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ امریکی صدر براک اوباما کے انسداد دہشت گردی کے مشیر اور مرکزی انٹیلی جنس ایجنسی سی آئی اے کے نامزد سربراہ جان برینان نے ایک بیان میں یورپی ممالک سے مطالبہ کیا کہ وہ حزب اللہ کے ڈھانچے ،مالی وسائل اور آپریشنل نیٹ ورک کو بے نقاب کرنے کے لیے فعال انداز میں کارروائی کریں۔

بلغاریہ کے وزیر داخلہ سونتان سونتوف نے منگل کو دارالحکومت صوفیہ میں ایک نیوز کانفرنس میں بتایا کہ ''ہمیں حزب اللہ کی جانب سے دوافراد کو رکنیت دینے اور انھیں مالی وسائل مہیا کرنے کی اطلاعات ملی ہیں۔ان میں ایک خودکش بمبار تھا''۔انھوں نے بتایا کہ اسرائیلیوں پر بم حملے میں تین افراد ملوث تھے اور ان میں سے دو کے پاس آسٹریلیا اور کینیڈا کے بالکل درست پاسپورٹس تھے۔

مسٹر سونتوف نے کہا کہ ''ہم تفتیش کے بعد اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ ان میں سے دو حزب اللہ کے عسکری ونگ کے ارکان تھے۔ ان دونوں اور حزب اللہ کے درمیان مالی لین دین اور روابط کے ثبوت ملے ہیں''۔

یاد رہے کہ بلغاریہ کے جنوب مشرق میں واقع ساحلی شہر برگاس میں 19 جولائی 2012ء کو غیر ملکی سیاحوں کی بس پر خودکش بم حملے میں پانچ اسرائیلی یہودی اور ان کا بلغاری ڈرائیور ہلاک اور بیس سے زیادہ افراد زخمی ہو گئے تھے۔

بلغاریہ میں اس بم دھماکے کے فوری بعد اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے ایران پر اس کا الزام عاید کیا تھا اور دھمکی دی تھی کہ ان کا ملک ایران کو بھرپور قوت سے جواب دے گا۔ ایران نے اس الزام کی سختی سے تردید کی تھی اور اب حزب اللہ نے بھی اس کو اپنے خلاف اسرائیل کی مہم قرار دے کر مسترد کر دیا ہے۔