شامی تنازعے کے منفی اثرات سے دور رہنے کی کوشش کی جائے گی: تمام سلام

حزب اللہ نے بھی نئے سیٹ اپ کے لئے حمایت کا یقین دلایا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

لبنان کے صدر مشیل سلیمان نے دو روز تک سیاستدانوں سے بات چیت کرنے کے بعد سنی سیاستدان تمام سلام کو وزیر اعظم نامزد کیا تھا۔ پارلیمنٹ نے ان کی منظوری دے دی ہے۔ تمام سلام کے لیے حزب اللہ نے بھی حمایت کا عندیہ دیا تھا۔

لبنان کی پارلیمنٹ میں اعتدال پسند سنی سیاستدان تمام سلام کو نیا وزیر اعظم منتخب کر لیا گیا ہے۔ رائے شماری میں تمام سلام کے حق میں 124 ووٹ ڈالے گئے۔ لبنانی پارلیمنٹ 128 اراکین پر مشتمل ہے۔ اتنی بڑی تعداد میں اراکین پارلیمنٹ کی حمایت سے سیاسی مبصرین حیران رہ گئے ہیں۔

لبنانی روزنامے النہار کے سیاسی تجزیہ کار امین کاموریہ کا کہنا ہے کہ لبنان کے سیاسی مخالفین سمیت بیشتر اراکین کی جانب سے نئے وزیر اعظم کے لیے اتنی حمایت اس بات کا عندیہ دیتی ہے کہ تمام سیاسی گروپ ملک میں پیدا شدہ سیاسی خلا پُر کرنے کی خواہش رکھتے ہیں۔

تمام سلام نے پارلیمنٹ سے اپنے لیے وزارت عظمیٰ کی منظوری حاصل کرنے کے بعد لبنانی قوم کے نام اپنی پہلی نشری تقریر میں کہا کہ وہ سیاسی تفریق اور فرقہ واریت کو کم کرنے کی بھرپور کوشش کریں گے۔ نئے وزیر اعظم نے اس یقین کا اظہار بھی کیا کہ وہ ایک ایسی حکومت تشکیل دیں گے جو قومی مفادات کو حاصل کرنے کی پوری کاوش کرے گی۔ اس تقریر میں ان کا کہنا تھا کہ اس وقت اجتماعی کوشش کی ضرورت ہے تاکہ ملک کو ٹکڑوں میں بٹنے سے بچایا جائے۔

نئے لبنانی وزیر اعظم تمام سلام نے نیوز ایجنسی اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ ذاتی طور پر شامی عوام کی آزادی کے حامی ہیں۔ تاہم انہوں نے شام کی داخلی صورتحال کے تناظر میں اپنے ملک کی غیرجانبداری کو قائم رکھنے کا ذکر بھی کیا۔ تمام سلام کہتے ہیں کہ وہ ذاتی طور پر شامی لوگوں کے ساتھ ہیں اور ان کی آزادی اور انہی کی حاکمیت کے حامی ہیں۔

نئے وزیر اعظم نے شام کی پرتشدد داخلی صورتحال کے حوالے سے اپنے ملک کی غیرجانبداری کو قائم رکھنے کا واضح عندیہ دیا ہے۔ سلام کے مطابق اس پالیسی پر صرف اسی صورت میں عمل کیا جا سکتا ہے جب تمام سیاسی جماعتیں اس کی پابندی کریں۔ یہ امر اہم ہے کہ سبکدوش ہونے والے وزیر اعظم نجیب میکاتی نے بھی لبنان کو شام کے انتشار سے دور رکھنے کی کوشش کی تھی۔

ایک رکن پارلیمنٹ فرید میکاری کا کہنا ہے کہ تمام سلام ایک ایسے سیاستدان باپ کے بیٹے ہیں جو تمام عمر لبنان کے اتحاد کے داعی رہے تھے۔ شام کے حامی ایک مسیحی سیاستدان سلیمان فرانجیہ نے تمام سلام کے وزیر اعظم بننے پر اپنے تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان کا تعلق مارچ چودہ کے اتحاد سے ہے۔ لبنان میں نئی سیاسی حکومت کا قیام سعودی عرب کی ثالثی کے بعد عمل میں آ یا ہے۔ اس ثالثی کے باعث سنی سیاستدانوں کا اتحاد مارچ 14 قائم کیا گیا تھا۔ اس اتحاد کو مغربی طاقتوں کے ساتھ ساتھ بعض عرب ملکوں کی حمایت بھی حاصل ہے۔ لبنان میں مسیحی اور شیعہ آبادیوں کا اتحاد مارچ آٹھ کے نام سے پکارا جاتا ہے۔

تمام سلام لبنان کے ایک متمول سنی خاندان سے تعلق رکھتے ہیں جو خلافت عثمانیہ کے دور میں بھی اشرافیہ میں شمار ہوتا تھا۔ ان کے والد صاب سلام سن 1952 سے لے کر سن 1973 کے درمیان تک چھ مرتبہ وزارت عظمیٰ کے منصب پر فائز رہے تھے۔ سن 2008 میں وہ وزیر ثقافت رہ چکے ہیں۔ تمام سلام ایک کامیاب بزنس مین خیال کیے جاتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں