'حزب اللہ' دہشت گرد تنظیم ہے؛ بحرینی کابینہ کا فیصلہ

لبنانی شیعہ تنظیم کا نام دہشت گرد فہرست میں شامل کر لیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کویتی کابینہ نے لبنانی شیعہ تنظیم 'حزب اللہ' کا نام دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق کابینہ کا فیصلہ وزارت داخلہ اور خارجہ کو ارسال کر دیا گیا ہے تاکہ اس پر عمل درآمد کیا جا سکے، تاہم کابینہ کے فیصلے میں اس امر کی کوئی وضاحت نہیں ملتی کہ کسی عرب ملک کی جانب سے حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کے فیصلے کے کیا نتائج نکلیں گے۔

خلیجی ریاست بحرین میں ہونے والی تخریبی کارروائیوں کا الزام منامہ حکومت لبنانی حزب اللہ سے امداد لینے والی انتہا پسند مقامی شیعہ تنظیموں پر عاید کرتی ہے۔ اسی وجہ سے بحرینی کابینہ نے حزب اللہ کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

بحرین کا دعوی ہے کہ اس کے پاس واضح ثبوت موجود ہیں جن سے پتہ چلتا ہے کہ ریڈیکل شیعہ تنظیمیں حزب اللہ کی لاجسٹک اور مالی معاونت سے تربیت حاصل کر رہی ہیں اور یہی حلقے سیکیورٹی فورسسز کے خلاف حملوں پر اکساتے ہیں۔

بحرینی جماعت 'الاصالہ' کے نائب صدر عبدالحلیم مراد نے 'العربیہ' سے بات کرتے ہوئے کہا: "ترکی میں شامی مہاجرین کے ایک کیمپ میں ہماری ملاقات بشار الاسد کی فوج سے منحرف ایک فوجی افسر سے ہوئی، ان کا کہنا تھا کہ اہل بحرین، ہم پندرہ سال سے ایرانی سازشوں کے ذریعے آپ کو کمزور کرنے میں کوشاں رہے ہیں۔ اس کام میں حزب اللہ ہماری مددگار تھی۔"

بحرینی سینٹ نے حزب اللہ کے سربراہ نصر اللہ اور تنظیم کے دوسرے قائدین کے بیانات کو بحرینی معاملات میں واضح مداخلت سے تعبیر کیا ہے۔

"العربیہ" کو اپنے ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ سیکیورٹی لیول پر بحرین اور لبنان کے مذاکرات کا سلسلہ جاری ہے جس میں یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ حزب اللہ کے بیابات سے منامہ اور دوسرے بحرینی علاقوں میں مقیم لبنانی کمیونٹی کو گزند نہیں پہنچنے دیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں