.

یو این میں شامی مندوب کی "العربیہ" کے بارے میں دورغ گوئی

بشار الجعفری کا یو این کے خصوصی اجلاس میں خطاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل میں شام کے مستقل مندوب بشار الجعفری نے دعوی کیا ہے کہ انہوں نے "العربیہ نیوز چینل پر ایک پروگرام میں شامی دہشت گردوں کو بطور مہمان شریک دیکھا ہے۔

بشار الجعفری نے ان خیالات کا اظہار شام میں جاری بحران میں بچوں کی صورتحال سے متعلق خصوصی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ یاد رہے کہ العربیہ نیوز چینل نے کوئی ایسا پروگرام پیش نہیں کیا جس میں بہ بشار الجعفری کسی دہشت گرد کو مہمان بنایا گیا ہو۔

بشارالجعفری کے مطابق مزعومہ پروگرام میں شریک 'دہشت گرد' سے جب شام میں اسلام کے علاوہ دیگر مذہبی اقلیتوں سے متعلق سوال کیا گیا تو اس کا جواب تھا کہ وہ ان اقلیتوں کو موقع دیں گے کہ وہ یا تو اسلام میں داخل ہو جائیں یا پھر جزیہ دیں وگرنہ تیسری صورت میں انہیں قتل کر دیا جائے گا۔ شامی مندوب کے مطابق یہ صورتحال شام میں اقلیتوں کی زندگی سے متعلق خطرناک روش کا پتا دیتی ہے۔

شامی مندوب نے عالمی ادارے میں خطاب کرتے ہوئے العربیہ کے جس پروگرام کی جانب اشارہ کیا ہے وہ دراصل معروف اینکر پرسن کی میزبانی میں پیش کیا جانے والے پروگرام 'پوائنٹ آف آرڈر' ہے، جو گزشتہ ہفتے پیش کیا گیا۔ اس میں شام کی جیش الحر کی 'التوحید' یونٹ کے کمانڈر عبدالقادر صالح مہمان تھے۔ شام میں اقلیتوں سے متعلق سوال پر ان کا کہنا تھا کہ: "اقلیتوں کا بار بار ذکر سن کر میرا دل چاہتا ہے کہ میں بھی ان میں شامل ہو جاؤں۔ ہمیں یقین ہے کہ اقلیتیں آنے والے دنوں میں موجود حکمرانوں کے دور سے زیادہ بہتر زندگی گزاریں گی۔"

انہوں نے مزید کہا کہ"ہم ان کے حقوق کا احترام کرتے ہیں۔ ابھی تک کوئی ایسا واقعہ نہیں ہوا اور نہ ہی آئندہ ہو گا کہ جس سے ان کے حقوق کی خلاف ورزی کا شائبہ ہوتا ہو۔" عبدالقادر صالح نے تو اپنی گفتگو میں یہاں تک کہا کہ شمالی شام میں جیش الحر کے زیرنگیں علاقوں میں قائم شرعی ادارے اگر غلطی کرتے ہیں تو عوام ان کے خلاف بھی احتجاج کا حق رکھتے ہیں۔