.

شامی فوج کا برزۃ پر زمین سے زمین مار کرنے والے میزائل سے حملہ

شمالی حلب میں جیش الحر کا ہیلی کاپٹر مار گرانے کا دعوی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی نیوز نیٹ ورک 'سانا' نے انکشاف کیا ہے کہ بشار الاسد کی حامی فوج نے دمشق کے مضافات میں 155 نمبر یونٹس سے شمالی شام کے علاقے پر نصف گھنٹے میں چھے سکڈ میزائلوں سے حملہ کیا۔ ادھر شامی میڈیا سینٹر نے اپنے مراسلے میں بتایا ہے کہ دمشق کے برزہ علاقے شدید گولا باری کا سلسلہ دوبارہ شروع ہو گیا ہے۔ اس دوران زمین سے زمین تک مار کرتے والے چھے میزائل برزہ کے علاقے پر گرنے کی اطلاعات ہیں۔

جنرل انقلاب کونسل نے بتایا ہے کہ جمعرات کے روز سرکاری فوج کی فائرنگ سے 127 افراد ہلاک ہوئے۔ ان کی اکثریت دمشق اور اس کے نواحی علاقوں میں نشانہ بنی جبکہ ادلب اور حمص شہر میں شام کی سرکاری فوج کے ہاتھوں متعدد افراد لقمہ اجل بنے۔

حماہ شہر اور اس کے نواحی علاقوں میں نمایاں فوجی نقل و حرکت دیکھی جا رہی ہے۔ شامی رضاکاروں نے بتایا کہ سرکاری فوج اور جیش الحر کے درمیان کئی مہینوں بعد شدید جھڑپیں ہوئیں۔ ان جھڑپوں کے ذریعے سرکاری فوج کو ریلیف فراہم کرنا ہے جو مختلف مقامات پر باغیوں کے حملوں کی زد میں ہے۔

لائیو سیرئین نیٹ ورک کے مطابق جیش الحر نے حماہ کے راستے میں ناصح علوانی سکول کے پاس سرکاری فوج کے ناکے پر جیش الحر نے قبضہ کر لیا ہے۔

درایں اثناء شامی انقلاب کونسل نے اعلان کیا ہے کہ حماہ کے مشرقی علاقے میں طیبہ الاسم قصبے پر شدید گولا باری کی گئی ہے۔ اس کے جلو میں سرکاری فوج اور جیش الحر کے درمیان شدید لڑائی کی اطلاعات بھی ہیں۔

شمالی حلب سے موصولہ اطلاعات کے مطابق جیش الحر نے سرکاری فوج کا ایک ہیلی کاپٹر مار گرایا۔ یہ ہیلی کاپٹر شہر میں ائر فورس انٹلیجینس کے ذیلی دفتر کے قریب گرا ہے۔