.

جہری آواز کا جادو جگانے والے فلسطینی صداکار عرب دنیا کے دلوں کی دھڑکن

محمد عساف کی’’عرب آئیڈل‘‘ کے فائنل تک رسائی، رام اللہ میں جوش و خروش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطینی سٹار محمد عساف ایم بی سی چینل کے مقبول عام میوزک پروگرام ’’عرب آئیڈل‘‘ میں جیسے جیسے اپنی آواز کا جادو جگا رہے ہیں ان کی شہرت کو چار چاند لگتے جا رہے ہیں. ہر گزرتے دن کے ساتھ وہ بیک وقت غزہ اور رام اللہ کے لاکھوں فلسطینیوں اور عرب دنیا کے نوجوانوں کے دلوں کی دھڑکن بنتے جا رہے ہیں. عساف نے اپنی سریلی اور جادو بھری آواز سے لاکھوں لوگوں کو اپنا گرویدہ بنا لیا ہے۔

انٹرنیٹ پر پھیلائی جانے والی ایک ویڈیو میں جیسے ہی محمد عساف کے عرب آئیڈل پروگرام کے آخری مرحلے کے لیے چنے جانے کا اعلان کیا گیا، سیکڑوں نوجوانوں ججوں کے سامنے شاندار پرفارمنس پر بھرپور تالیوں کے ساتھ انہیں خراج تحسین پیش کیا۔

لبنان کے نامور سنگر راغب علامہ، جو ’’عرب آئیڈل‘‘ پروگرام کے سیزن ٹو کے ججز میں بھی شامل ہیں نے، غزہ سے تعلق رکھنے والے محمد عساف کو ایک 'میزائل' قرار دیا ہے۔ سچ تو یہ ہے کہ منفرد آواز والے محمد عساف کی آواز اتنی سریلی ہے کہ انہیں اس طرح کے کسی لقب کی ضرورت ہی نہیں۔

محمد عساف: ماضی اور حال کے آئینے میں

فلسطینی سٹار محمد عساف میں ایسے بہت سے اوصاف ہیں جن کے باعث وہ فلسطین اور عرب میں اس قدر پسند کیے جانے لگے ہیں۔ ان کی آواز کی سچائی اور اس میں موجود معنویت کے احساس کے علاوہ بھی ان کے ادا کردہ کلمات میں بہت کچھ ہوتا ہے جو انہیں رام اللہ سے لیکرغزہ تک کے کسی بھی دوسرے گلوکار پر فوقیت دلاتا ہے۔

محمد عساف کو صرف فلسطینی سازوں اورگانوں پر ہی پرفارم کرنا نہیں آتا بلکہ وہ عربی کے دوسرے لہجوں میں بھی بڑے بھرپور انداز میں گانا گاتے ہیں۔ یہ وہ لہجے ہیں جن میں کسی بھی دوسرے گائیگ کو گاتے ہوئے پریشانی محسوس ہوتی ہے۔ انہوں نے الجزائری لہجے میں ایک گانا ’’وھران ، وھران‘‘ گایا جس نے مقبولیت کے ریکارڈ قائم کیے۔ اسی طرح انہوں نے لیبی طرز میں بھی ایک گانا گایا جس نے بھی خوب شہرت کمائی۔ ایسی سرتال اور متنوع گانا گانے والے انتہائی کم ملتے ہیں۔

محمد عساف کے پرانے گانے انٹرنیٹ پر یوٹیوب اور متعدد دوسری ویب سائٹس پرموجود ہیں۔ان میں چند نغمے ایسے ہیں کہ جو انہوں نے صرف گیارہ سال کی عمر میں گائے تھے۔ اس وقت بھی ان کے گانے فلسطینیوں کے درد بھرے دلوں کو گرما دیتے تھے۔