.

مصر: سرکاری حکام کو ملنے والے تحائف نیلام کرنے کا فیصلہ

تحائف کی قیمتِ فروخت قومی خزانے میں جمع کرائی جائے گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی حکومت نے سرکاری عہدے داروں کو دوسرے ممالک اور غیر ملکی شخصیات کی جانب سے ملنے والے بیش قیمت تحائف کا آیندہ ہفتے نیلام عام کرنے کا اعلان کیا ہے۔

مصری وزیرخزانہ فیاض عبدالمنعم نے بتایا ہے کہ گذشتہ ایک سال کے دوران دوسرے ممالک کی جانب سے ملنے والے تحائف کی تعداد بیالیس ہوگئی ہے اور ان میں سے بیشتر بیش قیمت ہیں۔ان میں گھڑیاں، چاندی کی تلوار اور پلیٹیں،ریشم کے قالین ،ظروف ،الیکٹرانک آلات ،سیلولر فونز اور قلم شامل ہیں۔

مصری عہدے داروں کو یہ تحائف جولائی 2012ء سے جون 2013ء کے درمیان وصول ہوئے ہیں۔وزیرخزانہ نے بتایا کہ وزیراعظم ہشام قندیل اور سابق اور موجودہ وزراء نے غیرملکی شخصیات سے ملنے والے تحائف کو سرکاری خزانے میں جمع کرا دیا ہے۔ان میں وزیراعظم ہشام قندیل کے جمع کردہ تحائف کی تعداد تیرہ ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کے فیصلے کے تحت ایک سو ڈالرز سے زیادہ مالیت کے تحائف کا نیلام عام کیا جائے گا اور ان کی فروخت سے حاصل ہونے والی رقم قومی خزانے میں جمع کرائی جائے گی کیونکہ یہ تحائف مصر کو ملے تھے ،سرکاری عہدے داروں یا وزراء کو نہیں۔

عبدالمنعم نے بتایا کہ نیلام کیے جانے والے تحائف سے متعلق معلومات اور ان کی تصاویر پر مشتمل کیٹلاگ وزارت خزانہ کی ویب سائٹ پر دستیاب ہوگا۔