.

ٹریفک قانون کی خلاف ورزی پر کویت میں سیکڑوں گاڑیاں کا کچومر

"زیڈ ایکس" اور"جی ٹی" نمبروں کی 1300 کاریں ناکارہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کویت میں ٹریفک قوانین پر عملدرآمد کو یقینی بنانے اور اس کی خلاف ورزی کے مرتکب افراد کے خلاف شروع کی گئی حالیہ مہم میں سیکڑوں گاڑیاں قبضے میں لے کرانہیں اسکریپ میں تبدیل کردیا گیا ہے. ان گاٰڑیوں کے مالکان کو بھاری جرمانے بھی کیے گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کی رپورٹ کے مطابق ملک بھر میں ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کےخلاف حالیہ آپریشن اسسٹنٹ سیکرٹری برائے ٹریفک امور میجر جنرل عبدالفتاح العلی کی زیرنگرانی شروع کیا گیا، جسے ایک کامیاب کارروائی قرار دیا جا رہا ہے۔ شاہراؤں پر ٹریفک کا اژدہام شہریوں کے لیے سوہان روح بنا ہوا تھا۔ ٹریفک پولیس کی کارروائی سے ملک کی بڑی شاہراؤں اور اندرون شہر ٹریفک کے بہاؤ میں کافی حد تک بہتری آئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق میجر جنرل عبد الفتاح العلی خود مہم کی قیادت کر رہے ہیں۔ انہوں نے قانون مخالفین کو کیفر کردار تک پہنچانے کا عزم کر رکھا ہے۔ مہم میں جنرل الفتاح قانون کی دھجیاں بکھیرے والوں کا ان کے گھروں تک تعاقب کر رہے ہیں۔ چند دنوں سے جاری اس مہم کے دوران اب تک "جی ٹی" اور"زیڈ ایکس" نمبروں اور ماڈل کی سیکڑوں گاڑیاں ضبط کرکے انہیں اسکریپ میں تبدیل کیا گیا ہے. نیز ان گاڑیوں کے مالکان سے تیس ملین ڈالرمالیت کے جرمانے وصول کرکے قومی خزانے میں جمع کرائے گئے ہیں۔ جنرل عبدالفتاح العلی نے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کوخبردار کیا ہے کہ "وہ خود کو قانون کے حوالے کردیں ورنہ پولیس صحراء تک ان کا تعاقب کرے گی۔"

مہم کے آغاز کے بعد العربیہ ڈاٹ نیٹ نے اسسٹنٹ سیکرٹری برائے ٹریفک امور میجر جنرل عبدالفتاح سے رابطے کی متعدد کوششیں کامیاب نہیں ہوسکیں۔ تاہم کویت محکمہ داخلہ کے سیکیورٹی ذرائع کے مطابق کہ ٹریفک خلاف ورزی کے مرتکب افراد کے خلاف جاری تازہ مہم سے ٹریفک کی روانی میں بہتری آئی ہے۔ ملک بھر کی شاہراؤں اور شہروں میں اس کے اثرات دیکھے جا رہے ہیں۔ ذرائع نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ تازہ کاررائی میں قبضے میں لی گئی سیکڑوں گاڑیوں کے ناکارہ ہونے کے باعث انہیں اسکریپ میں تبدیل کردیا گیا ہے۔

1700 جعلی ڈرائیونگ لائنس ضبط

کویت میں ٹریفک کے حوالے سے درپیش مشکلات میں کم عمر افراد اور جعلی ڈرائیونگ لائنسز کا اجراء ایک اہم مسئلہ ہے۔ میجر جنرل عبدالفتاح العلی نے بتایا ہے کہ گذشتہ دو ماہ کے دوران 1700 جعلی ڈرائیونگ لائنس رکھنے والوں کے خلاف کارروائی کی گئی۔

کویت کی ایک خاتون شہری مشاعل المطیری نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو ٹریفک کی تازہ صورت حال کے بارے میں بتاتے ہوئے عبدالفتاح العلی کی نگرانی میں جاری مہم کو سراہا۔ المطیری کا کہنا تھا کہ ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کی روک تھام کی مہم سے قبل سڑکوں پر بے ہنگم ٹریفک سے ایسے محسوس ہوتا تھا کہ یہ غیر مہذب لوگوں کا ملک ہے، کیونکہ ٹریفک کے سرخ اشاروں کے روشن ہونے کے باوجود لوگ گاڑیاں چلاتے رہتے، جس سے ٹریفک گھنٹوں پھنسی رہتی تھی۔