مصر کے عبوری صدر عدلی منصور نے حلف اٹھا لیا

عوام کو 30 جون کو''عظیم انقلاب'' کا راستہ درست کرنے پر خراج تحسین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کی سپریم دستوری عدالت کے سربراہ عدلی منصور نے عبوری سربراہ ریاست کے طور پر حلف اٹھا لیا ہے۔

مسلح افواج نے گذشتہ روز منتخب صدر محمد مرسی کو برطرف کرنے کے بعد عدلی منصور کوعبوری آئینی صدر مقرر کیا تھا۔فوج کے ایک فرمان کے مطابق وہ نئے صدر کے انتخاب تک اس عہدے پر برقرار رہیں گے۔

عبوری صدر کی حلف برداری کی تقریب جمعرات کو قاہرہ میں دستوری عدالت میں ہوئی اور یہ العربیہ ٹی وی پر براہ راست نشر کی گئی ہے۔عدلی منصور نے اپنے نئے عہدے کا اٹھاتے وقت حلف کی یہ عبارت پڑھی ہے:''میں جمہوریہ کے نظام کے تحفظ کا حلف اٹھاتا ہوں۔میں آئین اور قانون کا احترام کروں گا اور عوام کے مفادات کا خیال رکھوں گا''۔

انھوں نے برطرف صدر کے اقتدار کی پہلی سالگرہ کے موقع پر ملک گیر احتجاجی مظاہرے کرنے والے مصری عوام کو خراج تحسین پیش کیا ہے۔اس کے ساتھ ساتھ انھوں نے میڈیا ،فوج اور پولیس فورس کے کردار کی بھی تعریف کی ہے۔انھوں نے کہا کہ ''میں مصری عوام کو تیس جون کو عظیم انقلاب کا راستہ درست کرنے پر سلام پیش کرتا ہوں''۔

سڑسٹھ سالہ عبوری صدر نے کہا کہ ملک گیر مظاہروں کے ذریعے مصری عوام نے دنیا کے سامنے مشکلات کے مقابلے میں اپنے عزم کو ثابت کردیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ مصری میڈیا نے دلیری کا ثبوت دیتے ہوئے عوام کو روشنی کی کرن دکھائی اور سابق حکومت کی غلط رویوں کو بے نقاب کیا ہے۔

انھوں نے ''مسلح افواج کو تعریف کرتے ہوئے کہا کہ انھوں نے ہمیشہ عوام کا ضمیر ہونے کا ثبوت دیا ہے اور قوم اور عوام کے مطالبے پر پورا اترنے میں ایک لمحے کے لیے بھی کسی ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کیا''۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں