.

مصری فوج خود کو سیاست سے دور رکھے: ابو الفتوح

"مرسی نے نااہلوں پر تکیہ کیا، اپوزیشن کی ناراضی حیران کن تھی"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی ممتاز اسلامی اعتدال پسند شخصیت اور اہم سیاسی رہنما عبدالمنعم ابو الفتوح صدر مرسی کی برطرفی کے بعد پیدا شدہ صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ مصری فوج کو اپنے بچاو کے لیے بھی ملکی سیاست سے خود کو دور رکھنا چاہیے۔

"العربیہ" کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں ان کا کہنا تھا الاخوان کی طرف سے فوج کو بدنام کرنے کی کوشش کے باعث فوج سمیت تمام ریاستی اداروں کے لیے خطرہ پیدا ہو گیا ہے. انہوں نے کہا فوج ایک ایسا ادارہ تھا جو حسنی مبارک کے زمانے میں بھی کسی ٹوٹ پھوٹ سے محفوظ رہا تھا.

ابو الفتوح نے معزول کیے گئے صدر کی غلطی کی نشان دہی کرتے ہوئے کہا ڈاکٹر مرسی دیگر سیاسی قوتوں کے ساتھ شراکت اور تعاون کی حکمت عملی اختیار کرنے میں ناکام رہے اور انہوں نے ریاستی امور کی اجام دہی کے لیے نااہل رفقاء پر انحصار کیا۔ تاہم انہوں نے صدر مرسی کے خلاف اپوزیشن کے اس قدر غصے پر حیرت کا اظہار کیا۔

واضح رہے عبدالمنعم ابوالفتوح اخوان سے نہ صرف وابستہ رہ چکے ہیں بلکہ اس قائدین میں شامل رہے ہیں تاہم مصری صدارتی انتخاب کے سلسلے میں اخوان کے امیدوار کی نامزدگی کے موقع میں اخوان المسلمون سے الگ ہو گئے تھے.