.

الجزیرہ ٹی وی کے تقریبا 22 کارکن مستعفی ہو گئے

"ادارتی پالیسی کے تحت اخوان کی حمائت کے لیے کہا جا رہا تھا"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے صدر ڈاکٹر محمد مرسی کی فوج کے ہاتھوں برطرفی سے اب تک قطر کے معاصر ٹی وی چینل 'الجزیرہ' کے تقریبا بائیس سٹاف ممبران ادارے کی ادارتی پالیسی سے پیشہ ورانہ بنیادوں پر اختلاف کرتے ہوئے مستعفی ہو گئے ہیں۔

مبینہ طور پر مزکورہ ٹی وی چینل معزول صدر کے حق میں تعصب کا شکار ہو رہا تھا۔ اس لیے ادارے کی مبینہ جانب داری کے بعد اس سے وابستگی قائم رکھنا مشکل ہو گیا ۔ "الجزیرہ" سے الگ ہونے والے ان کارکنوں نے ادارے کی مصر کے موجودہ حالات کے بارے میں پالیسی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ انہیں کہا جا رہا تھا کہ "اخوان المسلمون کی طرف داری کی جائے".

گلف نیوز کے مطابق میڈیا کے ان بائیس کارکنوں کے استعفوں کی بنیادی وجہ یہی بنی ہے تاہم دیگر ذرائع نےاس وجہ سے مستعفی ہونے والے کار کنوں کی تعداد صرف سات بتائی ہے۔ البتہ گلف نیوز کا کہنا کہ دوحہ میں الجزیرہ کے ہیڈ آفس سے ادارتی سٹاف کے چار ارکان نے اسی بنیاد پر احتجاجا استعفے دے دیے ہیں۔