نئی کابینہ میں اخوان کی شمولیت ممکن ہے: مصری وزیر اعظم

صرف صلاحیت اور اعتباریت کی بنیاد پر کابینہ کے ارکان کا انتخاب کیا جائے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کے عبوری وزیراعظم حازم الببلاوی کا کہنا ہے کہ وہ نئی کابینہ میں اخوان المسلمون کو مناصب دینے کے امکان کو نظرانداز نہیں کررہے ہیں اور اخوان کے اہل افراد کو عہدے دیے جاسکتے ہیں۔

انھوں نے جمعرات کو اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ''میں سیاسی وابستگی کی جانب نہیں دیکھتا۔اگر اخوان المسلمون کے سیاسی چہرہ حریت اور عدل پارٹی میں سے کسی کو کابینہ کے لیے نامزد کیا گیا اور وہ اہل ہوا تو اس کے نام پر غور کیا جائے گا''۔

انھوں نے کہا کہ ''میں نے نئی حکومت کے لیے دو معیار مقرر کیے ہیں۔ایک مہارت اور دوسری اعتباریت۔ اس لیے اب تک میں نے کسی سے رابطہ نہیں کیا ہے''۔انھوں نے کہا کہ میں پہلے بہترین امیدواروں کا فیصلہ کرنا چاہتا ہوں اور اس کے بعد انھیں کابینہ میں شمولیت کی دعوت دی جائے گی۔

مصر کے عبوری وزیراعظم اپنی نئی کابینہ کی تشکیل کے لیے مختلف سیاسی قائدین سے صلاح مشورے کررہے ہیں لیکن انھیں سابق صدر محمد مرسی کے حامیوں اور مخالفین دونوں کی جانب سے سخت مخالفت کا سامنا ہے۔ان دونوں فریقوں نے عبوری صدر عدلی منصور کے جاری کردہ عبوری آئینی اعلامیے کو مسترد کردیا ہے۔

اخوان المسلمون نے عبوری وزیراعظم کی جانب سے نئی کابینہ میں شمولیت کی پیش کش پہلے ہی ٹھکرا دی ہے اور اس نے جمعہ کو منتخب جمہوری صدر محمد مرسی کی حکومت کا تختہ الٹنے کے لیے ''خونیں فوجی انقلاب'' کے خلاف عوام سے ریلی نکالنے کی اپیل کی ہے۔

جماعت کے ترجمان طارق المرسی نے گذشتہ روز ایک بیان میں کہا کہ''ہم فوجی انقلاب کے بطن سے سامنے آنے والے عہدے داروں سے کوئی معاملہ نہیں کریں گے''۔اخوان المسلمون عبوری صدر کے جاری کردہ آئینی اعلامیے کو بھی مسترد کرچکی ہے۔

اس عبوری آئینی اعلامیے میں انتقال اقتدار کا نظام الاوقات وضع کیا گیا ہے۔اس کے تحت مصر میں پارلیمانی انتخابات 2014ء کے اوائل میں ہوں گے اور نومنتخب اسمبلی کا اجلاس منعقد ہونے کے بعد عبوری صدر آیندہ صدارتی انتخابات کا اعلان کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں