.

ایرانی صدر احمدی نژاد دو روزہ دورے پر عراق پہنچ گئے

اعلی عراقی عہدیداروں سے ملاقاتوں کے علاوہ کربلا اور نجف جائیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ماہ اگست کے آغاز پر اپنے عہدے سے سبکدوش ہونےوالےایرانی صدراحمدی نژاد عراق کے دو روزہ دورے پر بغداد پہنچ گئے ہیں۔ عراق پہنچنے پر ان کا والہانہ استقبال کیا گیا۔ بطور ایرانی صدر امکانی طور پریہ ان کا آخری غیر ملکی دورہ ہے ۔ احمدی نژاد بغداد میں عراقی نائب صدر سمیت دیگراٰعلی عراقی عہدیداروں سے ملاقاتیں کرنے کے علاوہ اہم شیعی زیارتوں پر بھی جائیں گے۔

ایرانی صدریہ دورہ عراقی صدر جلال طلابانی کی دعوت پر کر رہے ہیں تاہم عراق کے صدر بغرض علاج ان دنوں ملک سے باہر ہیں۔ اس لیے عراقی نائب صدرخدیار الخوزائی ایرانی مہمان کی میزبانی کر رہے ہیں ، نائب صدر نے احمدی نژاد کو ائیر پورٹ پر خوش آمدید کہا اور عراق کے سرکاری ٹیلی ویژن نےائیرپورٹ پر ہونے والی استقبالیہ تقریب براہ راست نشر کی۔

عراق حکومت کے ترجمان نے خبررساں اداروں کو بتایا ہے کہ ''ایرانی صدر کربلا میں حضرت امام حسین اورنجف میں حضرت علی کے روضوں کی زیارت کریں گے۔ واضح رہے کہ ایران اور عراق کے درمیان 1980 سے 1988 تک ایک خونی جنگ لڑی جا چکی ہے، لیکن امریکی افواج کے ہاتھوں عراقی آمر صدام حسین کے اقتدار کے خاتمے اور صدام حسین کی پھانسی کے بعد دونوں ملک ایک دوسرے کے قریب آگئے ہیں ۔اس دوران عراق میں ایرانی اثرو رسوخ نسبتا زیادہ ہوگیا ہے۔