ایرانی صدرکی تقریب حلف برداری: امریکا اور اسرائیل مدعو نہیں

واشنگٹن اور تل ابیب کو دعوت کے قابل نہیں سمجھتے: ایرانی ترجمان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران نے نو منتخب صدر حسن روحانی کی چار اگست کو ہونے والی تقریب حلف برداری میں امریکا اور اسرائیل کے سوا تمام ممالک کو شرکت کی دعوت دی ہے۔ ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ تہران امریکا اور اسرائیل کو صدرکی حلف برداری تقریب میں شرکت کے قابل نہیں سمجھتا، یہی وجہ ہے کہ ان دونوں ملکوں کوتقریب میں مدعو نہیں کیا گیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان عباس عراقجی نے ہفتہ وارمیڈیا بریفنگ میں بتایا کہ نو منتخب صدر ڈاکٹر حسن روحانی کی تقریب حلف برداری شیڈول کے مطابق چاراگست کو ہوگی۔ تقریب میں امریکا اور اسرائیل کے سوا تمام ممالک کو شرکت کی دعوت دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ صدر کی تقریب حلف برداری میں جوملک بھی شرکت کرے گا اس کا خیر مقدم کیا جائے گا لیکن امریکا اور اسرائیل اس قابل نہیں کہ ایران انہیں ایسی کسی اہم تقریب میں مدعو کرے۔ ترجمان نے کہا کہ جن ممالک کو تقریب میں شرکت کی دعوت دی گئی ہے ان کے نام جلد منظرعام پرآ جائیں گے تاہم ان میں امریکا اوراسرائیل کا نام شامل نہیں ہوگا۔

درایں اثناء نیم سرکاری خبر رساں ایجنسی"ایسنا" کے مطابق تہران میں متعین تُرکی کے سفیرنے کہا ہے کہ ان کے ملک کا وزارتی سطح کا ایک وفد منتخب صدر حسن روحانی کی تقریب حلف برداری میں شرکت کرے گا۔

ترک سفیر اومیت یاردیم نے "ایسناء" کو بتایا کہ حسن روحانی کے ایرانی صدرمنتخب ہونے پر ترک صدرعبداللہ گل اور وزیراعظم رجب طیب ایردوآن نے تہنیتی پیغامات بھیجے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ رواں سال کے اختتام یا آئندہ سال کے آغاز میں ترک صدر اپنے ایرانی ہم منصب سے ملاقات بھی کریں گے۔

ادھر شامی وزیراعظم وائل الحلقی نے دمشق میں متعین ایرانی سفیر محمد رضا رؤف شیبانی سے ملاقات میں کہا ہے کہ ان کا ملک نو منتخب صدر حسن روحانی کی تقریب حلف برداری میں شرکت کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں