.

اسرائیل کا خلیجی ریاستوں سے بہتر تعلقات کے لئے ٹیوٹر کا سہارا

"خصوصی ٹیوٹر اکائونٹ کے ذریعے خیر خواہی دکھا رہے ہیں"

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی حکومت کا کہنا ہے کہ اس نے خلیج تعاون کونسل کے ساتھ مذاکرات کو فروغ دینے کے لئے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ایک خصوصی اکاونٹ بنایا ہے۔

عرب ۔ اسرائیلی تنازعہ کی وجہ سے جی سی سی رکن ممالک بحرین، کویت، عمان، قطر، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے تل ابیب کے ساتھ سفارتی تعلقات نہیں ہیں، اسی لیے صہیونی ریاست ٹیوٹر کا سہارا لیکر ان اہم عرب ملکوں سے تعلقات کا ڈول ڈالنا چاہتا ہے.

ابوظہبی سے شائع ہونے والے انگریزی اخبار 'دی نینشل' کے مطابق اسرائیل خلیج تعاون کونسل کے نام سے بنائے جانے والے اس ٹویٹر اکائونٹ کو کونسل کے ممبران کے لئے ایک ورچوئل ایمبسی قرار دیا جا رہا ہے اور اس کو اسرائیل کی وزارت خارجہ کے ڈائریکٹر ڈیجیٹل ڈپلومیسی یورام مراد چلاتے ہیں۔

'دی نیشنل' کے مطابق اسرائیلی وزارت خارجہ کے ترجمان یگال پالمور کا کہنا ہے کہ اس اکائونٹ سے فریقین کو باہمی تعاون کے ذریعے سے فائدہ حاصل ہوگا۔

پالمور کا کہنا تھا کہ "ہم جانتے ہیں کہ اس خطے اور اس کے دوسرے حصوں میں جاری سیاسی حالات کو پہچانتے ہیں اور یہ بھی ان کو حل کرنا آسان نہیں ہے مگر ہمیں کہیں سے تو شروع کرنا پڑے گا اور اپنی خیرخواہی دکھانا پڑے گا۔"