.

شیخ الازہر نے مصر میں تشدد کے واقعات میں ہلاکتوں کی مذمت کر دی

ہلاکتوں کی عدالتی تحقیقات اور ذمے داروں کو سزا دی جائے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کی تاریخی جامعہ الازہر کے سربراہ نے برطرف صدر محمد مرسی کے بیسیوں حامیوں کی ہلاکتوں کی مذمت کر دی ہے اور ان کی عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

شیخ الازہر احمد الطیب نے ایک بیان میں ہفتے کے روز پیش آئے تشدد کے واقعات میں متعدد افراد کی موت پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ان ہلاکتوں کی مذمت کی ہے اور ان کی فوری عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

انھوں نے کہا کہ ''ان ہلاکتوں کے ذمے داروں کو ان کی وابستگی سے قطع نظر سزا دی جائے''۔ہفتے کے روز برطرف صدر محمد مرسی کے بیسیوں حامیوں کو فائرنگ کرکے ہلاک کردیا گیا ہے اور یہ تشدد کا بدترین واقعہ ہے''۔

مصر کی وزارت داخلہ نے اخوان المسلمون پر خونریز جھڑپوں کا الزام عاید کیا ہے۔وزارت نے پولیس کی جانب سے مظاہرین پر براہ راست فائرنگ کی تردید کی ہےاور کہا ہے کہ اس نے لوگوں کو منتشر کرنے کے لیے صرف اشک آور گیس استعمال کی ہے۔

صدر مرسی کے حامیوں کے مطابق ان کی مخالفین کے ساتھ جھڑپوں مِیں ایک سو سے زیادہ افراد مارے گئے ہیں۔قاہرہ کی جامعہ رابعہ العدویہ کے باہر قائم فیلڈ اسپتال میں سینتیس لاشیں لائی گئی ہیں اور مصر کی ایمرجنسی سروس کے مطابق دوسرے اسپتالوں میں انتیس لاشیں پہنچائی گئی ہیں۔