.

''مصر میں ایک اور جنرل سیسی پیدا ہو گیا''

فوجی سربراہ کی اپیل پر مظاہرہ میں شریک خاتون کے ہاں بچے کی پیدائش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر جہاں تین جولائی کے بعد معزول صدر مرسی کے حامی مسلسل احتجاج کر رہے ہیں اور اب تک قاہرہ سمیت ہر جگہ ہونے والے مظاہروں میں متعدد ہلاکتیں ہونے سے پورے ملک کی فضا سوگوار ہے۔ وہیں قاہرہ میں ایک مظاہرے سے زندگی اور شادمانی کے انگڑائی لینے کی خبر بھی سامنے آئی ہے۔ یہ مظاہرہ کئی حوالوں سے ایک منفرد مظاہرہ ثابت ہوا۔

مصر سے شائع ہونے والے ایک غیرسرکاری اخبارنےرپورٹ کیا ہے کہ مصرمیں جمعہ کے روز جنرل عبدالفتاح کی اپیل پر مظاہرے میں شرکت کے دوران ہی فوج کی ایک حامی عورت نے بچےکو جنم دے دیا ۔ یہ خاتون زچگی کا مرحلہ قریب ہونے کے باوجود فوجی سربراہ کی اپیل پر مظاہرین میں شامل تھی کہ اس نے ایک بچے کو جنم دے دیا، مظاہرے کے دوران پیدا ہونے والے اس نو مولود کا نام بھی فوجی سربراہ سے محبت کے باعث "السیسی" ہی رکھا گیا ہے۔

واضح رہے کہ جنرل السیسی کی طرف سے ملک میں جاری دہشتگردی ختم کرنے کیلئےعوام سے مدد طلب کرنے پر ہزاروں مظاہرین نے قاہرہ کے اتحادیہ صدارتی محل اور مشہور تحریرسکوائر کے باہراحتجاج کیا۔ اسکے ساتھ ہی سابق معزول صدر محمد مرسی کے ہزاروں حامیوں نے قاہرہ اور دوسرے شہروں میں احتجاجی ریلیوں کا انعقاد کیا۔

قاہرہ میں فوج کے حق میں اس مظاہرے میں شریک مظاہرین کی حفاظت کے لیے فوجی ہیلی کاپٹر مظاہرین کے اوپر گشت کر رہے تھے اور ہر طرف خوشی کا سما ں تھا اس خوشی کو ''نئے سیسی'' کی آمد نے دوبالا کر دیا۔

تاہم سکندریہ میں مرسی کے حق میں مظاہرے کے موقع پر دوگروہوں کے درمیان پرتشدد تصاد م کے نتیجے میں کم ازکم پانچ افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے اور کئی زخمی ہو گئے۔ بعد ازاں پولیس نے مداخلت کر کے اشک آور گیس کی اور مظاہرین کو منتشر کر دیا۔