کویت پارلیمانی انتخاب میں 21 نئے چہروں کی پہلی مرتبہ کامیابی

حالیہ پارلیمانی انتخاب میں سب سے زیادہ نقصان خواتین کو ہوا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

کویت میں گذشتہ روز ہونے والے پارلیمانی انتخاب کے ابتدائی غیر حتمی نتائج کئی لحاظ سے حیران کن ہیں۔ کامیاب ہونے والے امیدواروں کی بڑی تعداد ایک ایسی ہے جو پہلی مرتبہ خلیجی ریاست کی 'الامہ' نامی پارلیمنٹ کا رکن منتخب ہوئے ہیں جبکہ اس انتخاب کی ایک اور خاص بات ان منجھے ہوئے سیاستدانوں کی جیت ہے کہ جو طویل عرصے تک پارلیمانی سیاست سے دور تھے۔

العربیہ نیوز چینل کے رپورٹ کے مطابق پچاس رکنی کویتی پارلیمنٹ میں اکیس کامیاب امیدوار ایسے ہیں کہ جنہوں نے پہلی مرتبہ قومی سطح کے کسی نمائندہ ادارے کے انتخاب میں حصہ لیا۔ گذشتہ دو پارلیمانی انتخابات میں شرکت نہ کرنے والے دس سے زائد سیاستدان ہفتے کے روز ہونے والے انتخاب میں اپنی ایوان کے اندر واپسی یقینی بنانے میں کامیاب ہوئے ہیں۔

یاد رہے کہ ان انتخابات میں سب سے زیادہ خسارے میں خواتین رہی ہیں کیونکہ ان کی انتخابی عمل میں شرکت اور کامیابی دونوں انتہائی مایوس کن رہی۔

کویت میں خواتین کو ووٹنگ کا حق ملنے کے بعد ان کی شرکت مردوں کے شانہ بشانہ رہی، تاہم گذشتہ روز ہونے والے 'الامہ' کے انتخاب میں خواتین کی شرکت اور کامیابی دونوں مایوس کن رہی۔

اس سال صرف آٹھ خواتین نے الیکشن میں حصہ لیا، جن میں صرف دو خوش قسمت کامیاب ہو سکیں۔ کامیاب ہونے والی خواتین میں نمایاں نام ڈاکٹر معصومہ مبارک کا ہے۔ ڈاکٹر معصومہ خواتین کی نمائندگی ملنے کے بعد سے ہی الامہ کی رکن چلی آ رہی ہیں جبکہ کامیاب ہونے والی دوسری خاتون پارلیمنٹرین صفا الھاشم ہیں جو اس سے پہلی پارلیمنٹ میں بھی خواتین کی نمائندگی کر چکی ہیں۔

اسپیکر کے عہدے اور منتخب ایوان کی مختلف کمیٹیوں کی نامزدگی کا شور رہے گا۔ اس شور کی بازگشت اس وقت مزید تیز ہو جائے گی اگر منتخب ایوان کی سربراہی کی دوڑ میں نمایاں نام شریک ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں