مُرسی کے حامیوں نے ملٹری ہیڈ کواٹر کا محاصرہ، دھرنا ختم کر دیا

مصری فوج اور ڈیفنس کونسل کی سخت وارننگ کے بعد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصر کے صدر مقام قاہرہ سے "العربیہ" نیوز چینل کے نامہ نگار نے اطلاع دی ہے کہ فوج کی جانب سے سنگین وارننگ کے بعد معزول صدر ڈاکٹر محمد مرسی کے حامی ملٹری انٹیلی جنس کے ہیڈ کواٹر کے سامنے دھرنا ختم کرکے رابعہ العدویہ گراؤنڈ میں جمع ہونا شروع ہوگئے ہیں۔

نامہ نگار کے مطابق اخوان المسلمون کے حامیوں نے ملٹری انٹیلی جنس کے شاہراہ صلاح سالم پر قائم ہیڈکواٹر کے سامنے چند منٹ تک دھرنا دیا، جس کے بعد وہاں سے واپسی شروع کردی۔

العربیہ کے نامہ نگار کے مطابق ملٹری انٹیلی جنس کے باہرجمع معزول صدر کے ہزاروں حامیوں نے علامتی جنازے اٹھا کراحتجاج کیا۔ بعد ازاں مظاہرین ان علامتی جنازوں کوساتھ لیےایک بڑے جلوس کی شکل میں قاہرہ کے قریب النصر شہر کے رابعہ العدویہ گراؤنڈ میں جمع ہونا شروع ہوگئے ہیں۔ مظاہرین نے ہاتھوں میں چار روز قبل فوج کی فائرنگ سے مارے جانے والے اخوان المسلمون کے کارکنوں کی تصاویراٹھا رکھی تھیں اور وہ مسلسل معزول صدرکی بحالی کے حق میں مظاہرے کر رہے تھے۔

خیال رہے کہ قاہرہ میں ملٹری انٹیلی جنس کے باہرسے اخوان کے حامیوں کے دھرنے سے قبل فوج نے مظاہرین کوسنگین نتائج کی دھمکی دی تھی۔ مصرکی مسلح افواج کے ترجمان کرنل احمد محمد علی نے باضابطہ طور پر ایک بیان میں کہا تھا کہ مظاہرین کو متنبہ کیا جاتا ہے کہ وہ فوجی تنصیبات کے قریب نہ آئیں۔ فوجی تنصیبات کے قریب دھرنا دینا کسی خطرے سے خالی نہیں ہوگا اور فوج ایسے کسی بھی خطرے سے سختی سے نمٹے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں