مصر: اخوان کے قائدین کے خلاف 25 اگست سے مقدمے کی سماعت

جماعت کے صدر دفاتر کے باہر مظاہرین کی ہلاکتوں میں ملوث ہونے کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

مصر کی ایک عدالت نے اخوان المسلمون کے مرشد عام، ان کے دو نائبین اور تین دوسرے ارکان کے خلاف مظاہرین کی ہلاکتوں کے مقدمے کی سماعت کے لیے 25 اگست کی تاریخ مقرر کی ہے۔

اخوان کے مرشد عام محمد بدیع، ان کے دونائبین خیرت الشاطر اور رشاد بایومی پر 30 جون کو جماعت کے قاہرہ میں واقع ہیڈکوارٹرز کے باہر لوگوں کو مظاہرین کے خلاف تشدد پر اکسانے کا الزام ہے۔ محمد بدیع اس وقت روپوش ہیں جبکہ ان کے مذکورہ دونوں نائبین قاہرہ کی طرہ جیل میں بند ہیں۔

قاہرہ کے علاقے مقطعم میں واقع اخوان المسلمون کے صدر دفاتر کے باہر 30 جون کو (برطرف) صدر محمد مرسی کے حامیوں اور مخالفین کے درمیان جھڑپوں میں آٹھ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔اُس وقت ہزاروں افراد قاہرہ کی سڑکوں پر منتخب جمہوری صدر کے خلاف احتجاجی مظاہرے کررہے تھے۔

اس واقعہ کے تین روز بعد ہی مسلح افواج کے سربراہ جنرل عبدالفتاح السیسی نے ڈاکٹر محمد مرسی کا تختہ الٹ دیا تھا اور آئین کو معطل کردیا تھا۔ اب گیم الٹ ہوگئی ہے اور برطرف صدر کے ہزاروں حامی اور جمہوریت پسند گروپوں کے کارکنان مسلح افواج کے سربراہ کے ''نرم اور گرم انقلاب'' کے خلاف گذشتہ ایک ماہ سے سراپا احتجاج بنے ہوئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں